All posts by Faisal Khan

وزیراعظم عمران خان کے ڈیجیٹل پاکستان پروگرام میں اپنی خدمات سرانجام دینے کیلئے گوگل کی سنیئر پاکستانی ایگزیکٹو تانیہ ایدرس اہم عہدہ چھوڑ کر پاکستان آ گئیں

اسلام آباد(ویب ڈیسک)گوگل کی ایک سینیئر پاکستانی ایگزیکٹو تانیہ ایدرس اہم عہدہ چھوڑ کر پاکستان آگئی ہیں اور یہاں وہ وزیراعظم عمران خان کے ڈیجیٹل پاکستان وڑن پروگرام میں اپنی خدمات سرانجام دیں گی۔تانیہ ایدرس سنگاپور میں واقعہ گوگل کے علاقائی ہیڈ آفس میں اہم پوزیشن پر فائز تھیں لیکن وہ اپنی پرکشش نوکری چھوڑ کر پاکستان میں وزیراعظم عمران خان کے ڈیجیٹل وڑن پروگرام کی سربراہی کریں گی۔تانیہ نے امریکا کی میساچیوسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی سے ایم بی اے کی ڈگری حاصل کی ہے۔ڈیجیٹل پاکستان پروگرام کی افتتاحی تقریب سے خطاب میں تانیہ ایدرس کا کہنا تھا کہ میرا صرف ایک ایجنڈہ ہے اور وہ یہ ہے کہ میں پاکستان کو ترقی کرتا دیکھنا چاہتی ہوں۔
‘حکومت کو عام پاکستانی کے مستقبل کی پرواہ ہے’
تانیہ کا کہنا تھا کہ جب یہ حکومت آئی تو مجھے محسوس ہوا کہ میں پاکستان جاکر کچھ کرسکتی ہوں کیونکہ مجھے اعتماد تھا کہ اس حکومت کو عام پاکستانی کے مستقبل کی پرواہ ہے۔انہوں نے بتایا کہ جہانگیر ترین نے مجھے پاکستان آنے پر رضامند کیا اور وزیراعظم اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے وزیر سے ملاقات کروائی جس سے مجھے واپس پاکستان آنے کا حوصلہ ہوا۔ٹوئٹر پر اپنے بیان میں تانیہ ایدرس نے کہا ہے کہ ’میں وزیراعظم عمران خان اورجہانگیر ترین کا شکریہ اداکرتی ہوں کہ جنہوں نے مجھے موقع دیا تاکہ میں اپنے ملک کو کچھ لوٹا سکوں‘۔تانیہ ایدرس کا کہناہے کہ سب کی حمایت سے ہم انشاءاللہ ڈیجیٹل پاکستان وڑن کو حقیقت میں تبدیل کردیں گے۔آخر میں ان کا کہنا تھا کہ جیسا کے وزیراعظم کہتے ہیں کہ ‘ گھبرانا نہیں ہے’۔اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان نے ڈیجیٹل پاکستان وڑن پروگرام کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کرپشن کے خاتمے کےلیے ای گورننس ضروری ہے، اداروں میں جیسے ہی ای گورننس آئی، ادارےتبدیل ہوگئے۔عمران خان کا کہنا تھا کہ بے روزگاری کے جن پر قابو پانے کے لیے ٹیکنالوجی کا فروغ ناگزیر ہے،ڈیجیٹل پاکستان پروجیکٹ نوجوانوں کےلیےمفید ہے،اس کابھرپورفائدہ اٹھائیں گے۔وزیراعظم نے تانیہ ایدرس کے پاکستان آنے کے فیصلے کو سراہتے ہوئے کہا کہ جولوگ زندگی میں اوپرپہنچے انہوں نے بڑے فیصلے کیے ہیں ، چھوٹا فیصلہ ذاتی ہوتا ہے، جب کہ بڑا فیصلہ دوسروں کے لیے ہوتا ہے۔تقریب کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے معاون خصوصی اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے بتایا کہ ڈیجیٹل پاکستان میں 5 پیرامیٹرزکا تعین کیا گیا ہے، اس سے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبے کی استعداد میں اضافہ ہوگا۔فردوس عاشق اعوان نے مزید بتایا کہ ای گورننس سے شفافیت کو فروغ ملےگا، ڈیجیٹیلائزیشن سے ہر شعبے میں جدت لانے میں مدد ملےگی اور اس کے ذریعے عام آدمی کی معلومات تک رسائی ہوگی۔

اسلام آباد یونائیٹڈ کا مصباح کو ہیڈ کوچ بنانے کا باضابطہ اعلان

اسلام آباد (ویب ڈیسک)پاکستان سپر لیگ کی دو مرتبہ کی چیمپیئن اسلام آباد یونائیٹڈ نے مصباح الحق کو فرنچائز کا ہیڈ کوچ بنانے کا باقاعدہ اعلان کرتے ہوئے کوچنگ اسٹاف کی فہرست جاری کردی ہے۔پاکستان سپر لیگ 2020 کے لیے ڈرافٹ کا عمل کل لاہور میں منعقد ہو گا اور اس سے ایک دن قبل ہی اسلام آباد یونائیٹڈ نے اپنے کوچنگ عملے کا اعلان کرتے ہوئے مصباح الحق کو ہیڈ کوچ مقرر کردیا ہے۔یاد رہے کہ ڈین جونز کو ہیڈ کوچ کے عہدے سے برطرف کیے جانے کے بعد یہ بات واضح ہو چکی تھی کہ قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر مصباح الحق کو ہی اسلام آباد یونائیٹڈ کا ہیڈ کوچ مقرر کیا جائے گا۔آج اسلام آباد یونائیٹڈ نے مصباح کی تقرری کا باضابطہ اعلان کردیا ہے جبکہ اس کے ساتھ ساتھ دیگر کوچنگ اسٹاف کا اعلان بھی کردیا گیا ہے۔اسلام آباد یونائیٹڈ کے نئے کوچنگ عملے میں ٹیم کے کھلاڑی اور اسٹار لیوک رونکی کو ٹیم مینٹور کی ذمے داریاں بھی سونپ دی گئی ہیں۔اس کے ساتھ ساتھ مایہ ناز آف اسپنر سعید اجمل کو فرنچائز نے اسپن باو¿لنگ کوچ کی ذمے داریاں سونپ دی ہیں جبکہ ایرل ایلکوٹ ٹیم کے فزیو ہوں گے۔

خبردار! آپ کا اسمارٹ ٹیلی ویژن بھی آپ کی جاسوسی کرسکتا ہے، ایف بی آئی

ورجینیا(ویب ڈیسک) ایک حالیہ رپورٹ میں امریکی تفتیشی ادارے ”ایف بی آئی“ نے صارفین کو خبردار کیا ہے کہ اگر ان کے پاس کوئی جدید قسم کا اسمارٹ ٹیلی ویڑن ہے تو وہ بظاہر انہیں تفریح فراہم کرتے ہوئے ان کی جاسوسی بھی کرسکتا ہے۔بتاتے چلیں کہ اسمارٹ فون کی طرح اسمارٹ ٹی وی بھی ہر وقت انٹرنیٹ سے رابطے میں ہوتا ہے جسے ہم اپنی آسانی کیلئے ایک ”تفریحی کمپیوٹر“ بھی کہہ سکتے ہیں۔ اسمارٹ ٹی وی کا اپنا آپریٹنگ سسٹم ہوتا ہے جبکہ وہ اضافی طور پر کیمرے اور مائیکرو فون سے بھی لیس ہوتا ہے۔ایف بی آئی اور دوسرے سرکاری اور غیر سرکاری اداروں کے تعاون سے کیے گئے، حالیہ تجزیوں سے معلوم ہوا ہے کہ اسمارٹ ٹیلی ویڑنز میں سیکیورٹی کے حوالے سے کئی خامیاں موجود ہیں جن سے فائدہ اٹھاتے ہوئے کوئی بھی ہیکر آپ کے اسمارٹ فون کا سسٹم ”اغوائ“ کرسکتا ہے۔اس طرح بہت ممکن ہے کہ ایک طرف آپ اپنے اسمارٹ ٹی وی پر کوئی فلم دیکھ رہے ہوں تو اس دوران وہی اسمارٹ ٹی وی (اپنے کیمرے اور مائیکروفون کی مدد سے) خفیہ طور پر آپ کی ساری ریکارڈنگ کرتے ہوئے کسی دور دراز ہیکر کو بھیج رہا ہو۔ علاوہ ازیں، یہ بھی ممکن ہے کہ اگر آپ اسمارٹ ٹیلی ویژن کی مدد سے آن لائن فلمیں خرید کر دیکھ رہے ہیں تو کوئی ہیکر آپ کے بینک اکاﺅنٹ پر بھی حملہ آور ہوسکتا ہے۔ایف بی آئی کی مذکورہ رپورٹ میں خاص طور پر یہ نکتہ اجاگر کیا گیا ہے کہ اسمارٹ ٹیلی ویڑن میں سیکیورٹی اور پرائیویسی کے اقدامات پر خصوصی توجہ نہیں دی جاتی لہذا وہ ہیکرز کےلیے آسان ہدف ثابت ہوسکتے ہیں۔ویسے تو کمپیوٹر، انٹرنیٹ، اسمارٹ فون، اسمارٹ واچ اور انٹرنیٹ سے ہر وقت منسلک رہنے والے آلات کی ہیکنگ کوئی عجیب و غریب بات محسوس نہیں ہوتی لیکن یہ پہلا موقع ہے کہ جب اسمارٹ ٹیلی ویڑن کے ذریعے جاسوسی کا خدشہ سامنے آیا ہے۔ امید ہے کہ اسمارٹ ٹی وی بنانے والی کمپنیاں اپنے آئندہ ڈیزائنز میں اس پہلو پر بھی توجہ دینا شروع کردیں گی۔

علی ظفر فاسٹ بولر شعیب اخترکو دیئے گئے چیلنج میں ناکام

راولپنڈی ( ویب ڈیسک)راولپنڈی ایکسپریس شعیب اختر نے گلوکار علی ظفر کا چیلنج قبول کرتے ہوئے انہیں کلین بولڈ کردیا۔گلوکار واداکار علی ظفر اور قومی ٹیم کے سابق فاسٹ بولر شعیب اختر کے درمیان چند روز قبل سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر کرکٹ کے حوالے سے دلچسپ مکالمہ ہوا اور اس دوران دونوں نے ایک دوسرے کو چیلنج دے ڈالا۔راولپنڈی ایکسپریس نے اپنی ٹوئٹ میں علی ظفر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا سنا ہے بڑا کرکٹر ہے تو، جس پر علی ظفر نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ سنا ہے بڑے بولر ہیں آپ۔اس پر شعیب اختر نے کہا وقت اور جگہ بتاو¿ اور پھر ایک گیند بھی ٹچ کرکے دکھاو¿، علی ظفر نے جواب دیا ٹھیک ہے پھر میں بھی ایک گیند کرواو¿ں گا جو 172 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوگی۔بعد ازاں دونوں ستاروں کا جب گراو¿نڈ میں آمنا سامنا ہوا تو گلوکار علی ظفر نے اپنے وعدے کے مطابق تیز رفتار گیند کروائی اور اس کی ویڈیو ٹوئٹر پر اپ لوڈ کرتے ہوئے کہا کہ سر آپ نے بال ٹچ کرنے کی بات کی تھی، اور یہ گیند شاید 172 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے بھی زیادہ کی ہو۔راولپنڈی ایکسپریس کی جانب سے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ایک ویڈیو اپ لوڈ کی گئی جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہ علی ظفر ہاتھ میں بلا تھامے شعیب اختر کی بولنگ کا سامنا کررہے ہیں اور پہلی ہی گیند پر کلین بولڈ ہوجاتے ہیں۔ویڈیو کے ساتھ شعیب اختر نے لکھا کہ یہ وہ یارکر ہے جس سے بڑے بڑے برج الٹ جاتے ہیں، یقین نہ آئے تو میرے مداحوں سے پوچھ لو۔علی ظفر نے اس ٹوئٹ کے جواب میں کہا کہ ہماری بات تیز ترین گیند کی ہوئی تھی یہ تو سلو یارکر کا دھوکا تھا۔

ڈیجیٹل پاکستان سے نوجوان آبادی ہماری طاقت بن جائے گی، عمران خان

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وزیر اعظم عمران خان نے پاکستان کو ڈیجیٹل خطوط پر استوار کرنے کا عزم ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈیجیٹل پاکستان ہمارا مستقبل ہے اور اس کے ذریعے دنیا کی دوسری سب سے بڑی نوجوان آبادی کا حامل ملک ہونے کی بدولت ہماری آبادی ہماری طاقت بن جائے گی۔جمعرات کو ‘ڈیجیٹل پاکستان ویژن’ کے اجرا کی تقریب اسلام آباد میں منعقد ہوئی جہاں وزیر اعظم نے اس پروگرام کا آغاز کیا اور اس موقع پر ڈیجیٹل ویژن پاکستان کی سربراہ ڈاکٹر تانیہ ادریس، گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر، معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان، جہانگیر ترین اور وفاقی کابینہ کے اراکین سمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد بھی موجود تھے۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ مجھے ڈیجیٹل پاکستان پر پہلے توجہ دینی چاہیے تھی کیونکہ یہ ہمارے نوجوانوں کے لیے بہت اہم ہے، دنیا اس طرف جارہی ہے لیکن ہم پیچھے رہ گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اب ہماری پوری توجہ ڈیجیٹل پاکستان منصوبے پر ہو گی جس کے ذریعے ہم نوجوانوں کی صلاحیتیں دنیا بھر کے سامنے لائیں گے اور اس ایک چیز سے ہماری نوجوان آبادی ہمارے لیے طاقت بن جائے گی کیونکہ ہمارے پاس دنیا میں دوسری سب سے بڑی نوجوان آبادی ہے، یہ ہمارے لیے بہت بڑا موقع ہے اور ہم اس کا فائدہ اٹھائیں گے۔وزیر اعظم نے کہا کہ مجھے اوورسیز پاکستانیوں کا اندازہ ہے کہ ان کے بیرون ملک جانے کی کیا وجہ ہوتی ہے، ان کی پہلی کوشش ہوتی ہے کہ اپنے خاندان کو پالیں، انہیں اچھی تعلیم دیں لیکن پھر وہ اپنی زندگی میں عجیب مخمصے کا شکار ہو جاتے ہیں کیونکہ وہ پاکستان آنا چاہتے ہیں لیکن ان کے بچے وہاں کے عادی ہو چکے ہوتے ہیں اور وہ پاکستان آنا نہیں چاہتے لہٰذا اس صورت میں وہ وہیں پھنس جاتے ہیں۔’میں نے انگلینڈ میں پاکستانیوں کی کئی نسلیں دیکھیں اور ان کے مسائل بھی دیکھے’۔وزیر اعظم نے خصوصی طور پر اوورسیز پاکستانیوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کو زندگی میں ایک فیصلہ کرنا ہوتا ہے کہ آپ کی زندگی کا مقصد کیا ہے، یہ آپ اپنے آپ سے سوال پوچھتے ہیں اور جو اس کا صحیح جواب دیتے ہیں وہی لوگ دنیا میں اوپر بھی جاتے، عزت بھی ہوتی، ان کے دل میں سکون بھی ہوتا ہے لیکن جو لوگ غلط فیصلہ کر لیتے ہیں اور انہیں سمجھ نہیں آتی کہ زندگی کا کیا مقصد ہے تو انہیں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔اس موقع پر انہوں نے ڈیجیٹل پاکستان ویڑن کی سربراہ تانیہ اور گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ تانیہ گوگل کے لیے کام کر رہی تھیں اور پتہ نہیں کتنے پیسے لے رہی تھیں، مجھے تو یہ بھی نہیں پتہ ان کی تنخواہ کے چیک میں زیرو کتنے تھے جبکہ رضا باقر انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ کے لیے کام کررہے تھے جہاں ان کی ریٹائرمنٹ زیادہ دور نہیں تھی اور انہیں آئی ایم ایف کی پنشن بھی ملتی لیکن ان دونوں نے مشکل فیصلے کیے۔ان کا کہنا تھا کہ دنیا میں جو لوگ کامیاب ہوتے ہیں وہ مشکل فیصلے کرتے ہیں کیونکہ آپ بوڑھے ہی تب ہوتے ہیں جب زندگی سے مزاحمت اور چیلنجز ختم ہو جاتے ہیں، جس دن چیلنج ختم، اس دن زندگی ختم ہو جاتی ہے۔انہوں نے کہا کہ اوورسیز پاکستانیوں کے لیے پاکستان جانے کا فیصلہ کرنا مشکل ہوتا ہے کیونکہ انہیں دکھ رہا ہوتا ہے کہ یہاں مشکل حالات ہیں، کرپشن ہے، کام کرنے جاو¿ں گا تو اس سسٹم میں کیسے چلوں گا اور وہاں آسان زندگی ہوتی ہے لہٰذا اکثر لوگوں نے پاکستان واپس آنے کی کوشش کی لیکن جب مشکلات آئیں تو وہ چھوڑ کر واپس چلے گئے۔اس موقع پر انہوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ کسی بھی پیغمبر کی زندگی آسان نہیں تھی، ان سب نے مشکل راستہ اختیار کیا، ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم ایک کامیاب بزنس مین تھے لیکن آخر انہیں کیا ضرورت تھی کہ وہ مشکلات راستہ اختیار کریں کہ جس میں لوگ ان پر طنز کریں، جسمانی تشدد کریں اور انہوں نے 13سال مشکل وقت برداشت کیا جس کی انہیں ضرورت نہیں تھی کیونکہ وہ کامیاب بزنس کی حیثیت سے ایک مطمئن زندگی گزار رہے تھے۔انہوں نے اوورسیز پاکستانیوں اور پاکستان کے نوجوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ جو لوگ آسان راستہ ڈھونڈتے ہیں وہ آپ کی بہتری کا راستہ نہیں ہوتا، جن لوگوں نے بڑے کام اور بڑے فیصلے کیے ہیں انہوں نے آسان کے بجائے مشکل راستہ چنا اور بڑا فیصلہ وہ ہوتا ہے جس میں خطرہ اور رسک ہوتا ہے ورنہ ہر کوئی یہ کام کر لے لہٰذا جو لوگ بھی اوپر پہنچے ہیں انہوں نے بڑے فیصلے کیے ہیں۔اس موقع پر انہوں نے گورنر اسٹیٹ بینک اور تانیہ کی ہمت بندھاتے ہوئے کہا کہ وقت ثابت کرے گا یہ آپ کی زندگی کا بالکل درست فیصلہ اور ٹرننگ پوائنٹ تھا۔اس موقع پر انہوں نے ہلکے پھلکے انداز میں کہا کہ آپ سب مجھ سے یہ سب سن کر تنگ آ گئے ہوں گے کہ ‘بڑا مشکل وقت ملا ہمیں’ اور آپ یہ مجھ سے 5سال تک سنتے رہیں گے۔انہوں نے کہا کہ آپ پانچ سال تک یہ سنتے رہیں گے کہ ہمیں کتنا بڑا خسارہ ملا اور کرنٹ اکاﺅنٹ خسارہ کتنا تھا، ہمیں تمام ادارے خسارے میں ملے اور ہمارا روپیہ دباو¿ کا شکار تھا اور اس تمام تر خسارے کا سب سے بڑا اثر روپے پر پڑتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمارا روپیہ 200، ڈھائی سو اور تین سو تک جا سکتا تھا اور ہمارے پاس اسے روکنے کے لیے پیسے بھی نہیں تھے لیکن ہم نے اس کو ایک حد تک روک دیا، ہم نے اپنی تمام تر توجہ معاشی بہتری پر مرکوز رکھی اور ہماری معاشی ٹیم نے اس استحکام کے لیے بہت محنت کی۔اس موقع پر انہوں نے ای گورننس کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے کہا کہ ای گورننس بہت ضروری ہے کیونکہ ہمارے معاشرے میں کرپشن نیچے تک سرائیت کر چکی ہے، کرپشن ہمیشہ اوپر سے شروع ہوتی ہے، جنہوں نے اوپر سے کرپشن کی وہ تو باہر جا چکے ہیں لیکن یہ اب نیچے تک پہنچ چکی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش ہو گی کہ ای گورننس سے ہم کرپشن کو ختم کرنے کی کوشش کریں کیونکہ یہ کرپشن کے خاتمے اور لوگوں کی زندگی آسان بنانے کا واحد ذریعہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ای گورننس عوام کی زندگی آسان بنانے کا ذریعہ ہے، جب حکومت کے ساتھ عوام کا تعلق ہوتا ہے تو ان کی زندگی آسان ہو جاتی ہے، انہیں لائنوں میں کھڑا نہیں رہنا پڑتا اور آخر میں آپ کے موبائل فون پر ہی سب کچھ ہو جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ ہم شوکت خانم میں 19سال قبل ای گورننس لے کر آئے جس کا فائدہ یہ ہوا کہ پرچیاں ختم ہو گئیں، جتنی بھی چھوٹی موٹی چوری و کرپشن کے ذرائع تھے، وہ سب ختم ہو گئے اور میں نے خود اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ ایک ادارے میں جیسے ہی ای گورننس آئی تو پورا ادارہ تبدیل ہو گیا۔وزیر اعظم نے کہا کہ ہم اسی ای گورننس کو حکومتی اداروں میں بھی لاگو کرنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن افسوس سے کہنا پڑ رہا ہے کہ ہمیں شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے تاہم آپ دیکھیں گے کہ آنے والے دنوں میں ہماری حکومت ڈیجیٹل پاکستان کے لیے پورا زور لگائے گی۔

نواز شریف اور شہباز شریف کی وطن واپسی میں تاخیر دیکھ رہا ہوں، شیخ رشید

لاہور (ویب ڈیسک)وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید کا کہنا ہے کہ جو نئے الیکشن کا مطالبہ کررہے ہیں وہ الیکشن کمیشن بنانے میں تعاون نہیں کر رہے، پارلیمنٹ کے فیصلے عدالتیں کرنے لگیں تو وہ دن بھی آئے گا کہ عدالتیں ہی پارلیمنٹ کا فیصلہ کریں گی۔ان کا مزید کہنا تھا کہ جو چیئرمین سینیٹ کے لیے ان ہاو¿س تبدیلی نہیں لاسکے وہ وزیر اعظم کے لیے ان ہاو¿س تبدیلی کیسے لائیں گے؟وزیر ریلوے نے کہا کہ شہباز شریف ، نواز شریف کے ساتھ بطور ٹوکن گئے ہیں، میں نواز شریف اور شہباز شریف کی وطن واپسی میں تاخیر دیکھ رہا ہوں۔

’والدہ‘ ہونے کی بات چھپانے پر مس یوکرین سے اعزاز واپس لے لیا گیا

یوکرین (ویب ڈیسک)یورپی ملک یوکرین میں 2018 میں ’مس یوکرین‘ کا اعزاز حاصل کرنے والی 24 سالہ دوشیزہ ویرونیکا ددوسنکو سے جھوٹ بولنے اور قوانین کی خلاف ورزی کرنے پر اعزاز واپس لے لیا گیا۔ویرونیکا ددوسنکو گزشتہ برس یوکرین کی سب سے خوبصورت لڑکی قرار پائی تھیں اور وہ ایک سال تک ’مس یوکرین‘ رہیں۔ویرونیکا ددوسنکو ’مس یوکرین‘ منتخب ہونے کے بعد فلاحی منصوبوں میں مصروف ہوگئیں اور انہوں نے ملک بھر میں کافی شہرت بھی حاصل کی۔ویرونیکا ددوسنکو کو مس یوکرین منتخب ہونے کے بعد عالمی سطح کے مقابلے حسن کے لیے بھیجا گیا، تاہم ’مس ورلڈ‘ کا عالمی مقابلہ حسن شروع ہونے سے قبل ہی انتظامیہ کو علم ہوا کہ وہ ایک بچے کی والدہ ہیں۔امریکی نشریاتی ادارے ’سی این این‘ کے مطابق مس ورلڈ کا انعقاد کرنے والی انتطامیہ کو جب معلوم ہوا کہ 24 سالہ ویرونیکا ددوسنکو 5 سالہ بچے کی والدہ ہیں تو انہوں نے مس یوکرین منتظمین کو آگاہ کیا۔مس یوکرین کا مقابلہ منعقد کرنے والے منتظمین نے تفتیش کے بعد ویرونیکا ددوسنکو کو ایک 5 سالہ بچے کی والدہ قرار پایا۔بچے کی والدہ ہونے کی بات چھپانے کے جرم میں ’مس یوکرین‘ کی انتظامیہ نے ویرونیکا ددوسنکو سے اعزاز واپس لے لیا، جس کے بعد انہیں ’مس ورلڈ‘ کے مقابلے کے لیے بھی نااہل قرار دے دیا گیا۔تنظیم کی جانب سے اعزاز واپس لیے جانے کے بعد ویرونیکا ددوسنکو نے تنظیم کے خلاف قانونی چارہ جوئی کرنے کا اعلان کردیا۔’مس ورلڈ‘ کے مقابلے میں صرف وہی دوشیزہ حصہ لے سکتی ہے جو اپنے ملک کی سب سے حسین لڑکی منتخب ہوئی ہے اور اس کا انٹری اس کے ملک میں حسن کے مقابلے کا انعقاد کرنے والی تنظیم بھیجتی ہے۔’مس ورلڈ‘ کے 1951 میں بنائے گئے ضوابط و اصولوں کے مطابق مقابلہ حسن میں حصہ لینے والی لڑکی کا غیر شادی شدہ ہونا اور کسی طرح بھی بچے کی والدہ ہونا ممنوع ہے۔مس ورلڈ کی طرح مس یوکرین سمیت دیگر ممالک میں ہونے والے حسن کے مقابلوں کے بھی یہی ضوابط ہیں اور کسی بھی شادی شدہ یا بچے کو جنم دینے والی خاتون کو مقابلے کے لیے اہل قرار نہیں دیا جاتا۔اگر کوئی خاتون شادی اور بچے کے جنم کو خفیہ رکھیں گی اور بعد ازاں انکشاف ہونے پر ان سے اعزاز واپس لے لیا جاتا ہے، چاہے انہیں مقابلہ جیتے ہوئے کئی سال کیوں نہ گزر چکے ہوں۔اگرچہ مقابلہ حسن میں حصہ لینے والی لڑکیوں کا کنوارہ ہونا لازمی ہے، تاہم ان پر مقابلہ حسن میں حصہ لیتے وقت کسی کے ساتھ رومانوی تعلقات استوار کرنے یا نہ کرنے سے متعلق کوئی پابندی نہیں ہوتی۔مذکورہ حسن کے مقابلوں میں خواتین کو خوبصورتی، جسمانی خدوخال، ذہانت، اسٹائل، فیشن اور معلومات عامہ کی بنیاد پر منتخب کیا جاتا ہے۔

سپریم کورٹ سے ہمارا سمجھوتہ ہے ، پیسے دینے کا وعدہ نبھائیں گے، ملک ریاض

پشاور(ویب ڈیسک)چیئرمین بحریہ ٹاﺅن ملک ریاض کا کہنا ہے کہ ہم نےکوئی جرم نہیں کیا، سول معاملات پر تصفیہ ہوا ہے، سپریم کورٹ سے ہمارا سمجھوتہ ہے اور ہم پیسے دینے کا وعدہ نبھائیں گے۔پشاور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ملک ریاض نے کہا کہ برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی (این سی اے) نے ایک سال انکوائری کی، این سی اے کہتی ہم نے کوئی جرم نہیں کیا، سول معاملات پر تصفیہ ہواہے، ہمارا پاکستان کی حکومت کے ساتھ کوئی معاملہ نہیں۔چیئرمین بحریہ ٹاﺅن ملک ریاض کا کہنا تھا کہ ان کی اولاد اوورسیز پاکستانی اور برطانوی شہری ہے، سپریم کورٹ سے ہمارا سمجھوتہ ہے کہ یہ پیسہ پاکستان کو دینا ہے ہم اپنا وعدہ نبھائیں گے،خواہ ہمیں گھر بھی بیچنا پڑے ہم پیسہ دیں گے۔ملک ریاض کا کہنا تھا کہ پیسہ پاکستان آنا چاہیے اور ان کی طرح اورلوگوں کو بھی پیسہ پاکستان لانا چاہیے۔دوسری جانب برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی نے تصدیق کی ہے کہ پاکستان کی معروف کاروباری شخصیت نے 190ملین پاﺅنڈ (تقریباً38 ارب روپے)کی رقم یا اثاثوں کی فراہمی کرنے پر رضامند ی ظاہر کر دی ہے اور یہ خطیر رقم جلد ریاست پاکستان کو واپس کر دی جائے گی۔ذرائع کا کہنا ہے کہ رقم کی منتقلی آن لائن ہوتی ہے جس سے رقم کی منتقلی فوراً متعلقہ اکاو¿نٹ میں ہو جاتی ہے۔ ابھی این سی اے کے ساتھ تصفیے میں پاکستان کو 38 ارب روپے کی رقم، اثاثے منتقل ہونا ہیں۔
بحریہ ٹاو¿ن کیس
واضح رہے کہ4 مئی 2018 کو سپریم کورٹ نے بحریہ ٹاو¿ن کو سرکاری زمین کی الاٹمنٹ اور تبادلے کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے بحریہ ٹاﺅن کراچی کو رہائشی، کمرشل پلاٹوں اور عمارتوں کی فروخت سے روک دیا تھا۔بعد ازاں سپریم کورٹ نے بحریہ ٹاو¿ن کی جانب سے کراچی کے منصوبے کے لیے 460 ارب روپے دینے کی پیشکش قبول کرلی تھی۔سپریم کورٹ کے فیصلے کے تحت بحریہ ٹاو¿ن انتظامیہ کو 7 سال میں 460 ارب روپے کی ادائیگی کرنا ہوگی۔ رقم مکمل ادا کرنے پر کراچی میں زمین بحریہ ٹاو¿ن کے نام پر منتقل کردی جائے گی۔

مہوش حیات سابق صدر پرویز مشرف کی حمایت میں سامنے آگئیں

کراچی (ویب ڈیسک)صدارتی ایوارڈ یافتہ اداکارہ مہوش حیات نے سابق صدر پرویز مشرف سے اظہار ہمدردی کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’مشکل کی اس گھڑی میں کم سے کم انہیں ایک موقع دیا جانا چاہیے‘مہوش حیات نے پرویز مشرف کی جانب سے گزشتہ روز دبئی کے ایک ہسپتال سے جاری کی گئی ویڈیو کو ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ پرویز مشرف ہمارے ملک کے صدر رہے اور انہوں نے مشکل وقت میں ہماری رہنمائی کی‘۔اداکارہ کا کہنا تھا کہ اس مشکل گھڑی میں ہمیں سیاست کو کچھ دیر کے لیے سائیڈ میں رکھنا چاہیے اور انہیں کم سے کم ایک موقع دے کر ان کی بات سنی جائے‘۔واضح رہے کہ جنرل (ر) پرویز مشرف کے خلاف پاکستان کے آرٹیکل 6 کی خلاف ورزی پر سنگین غداری کا مقدمہ اسلام ا?باد کی خصوصی عدالت میں زیر سماعت ہے۔مہوش حیات نے لوگوں پر واضح کیا کہ کوئی پرویز مشرف سے نفرت کرے یا محبت لیکن یہ حقیقت ہے کہ وہ اس بات کے مستحق ہیں کہ انہیں سنا جانا چاہیے۔اداکارہ کا کہنا تھا کہ پرویز مشرف کو کم سے ایک موقع ملنا چاہیے، ساتھ ہی انہوں نے سوال کیا کہ ’کیا قانون کسی بھی شخص کو جرم ثابت ہونے تک بے گناہ قرار نہیں دیتا؟ادکارہ کی مذکورہ ٹوئٹ کو درجنوں افراد نے ری ٹوئٹ کیا جب کہ اسے ہزاروں افراد نے لائیک کیا، ساتھ ہی کئی افراد نے اس پر کمنٹس بھی کیے، بعض افراد نے مہوش حیات کی بات سے اتفاق کیا جب کہ کئی افراد نے ان سے اختلاف بھی کیا۔اداکارہ کی اسی ٹوئٹ پر وکیل اور انسانی حقوق کے رہنما امجد ملک نے سابق صدر آصف علی زرداری کی گرفتاری کے وقت لی گئی تصویر بھی شیئر کی اور کہا کہ مذکورہ شخص بھی ملک کے پانچ سال تک صدر رہے ہیں، ان کی بھی حمایت کریں یا پھر یہ کہیں کہ کسی کو بھی چھٹکارا نہ ملے۔امجد ملک کی جانب سے سوال کیے جانے پر مہوش حیات نے وضاحت کی کہ ’کوئی بھی شخص قانون سے بالاتر نہیں ہے، انہوں نے صرف اتنا کہا ہے کہ پرویز مشرف کو ایک موقع ملنا چاہیے‘۔خیال رہے کہ اس وقت پرویز مشرف ملک سے باہر ہیں اور گزشتہ روز ہی انہوں نے دبئی کے ایک ہسپتال سے ویڈیو بیان جاری کیا تھا، جس میں انہوں نے خود کو انتہائی علیل قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ ان کے خلاف قائم کیا گیا سنگین غداری کا کیس بے بنیاد ہے۔پرویز مشرف نے مذکورہ ویڈیو بیان ایک ایسے وقت پر جاری کیا ہے جب کہ اسلام آباد کی خصوصی عدالت نے 5 دسمبر تک اپنا بیان ریکارڈ کروانے کا حکم دے رکھا ہے۔اسلام آباد کی مذکورہ عدالت نے پرویز مشرف کے خلاف سنگین غداری کیس کے مقدمے کا فیصلہ گزشتہ ماہ 19 نومبر کو محفوظ کیا تھا اور اسے 28 نومبر کو سنانے کا اعلان کیا تھا۔تاہم مذکورہ فیصلے کو روکنے کے خلاف پرویز مشرف نے لاہور اور اسلام ا?باد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی تھی۔ساتھ ہی وفاقی حکومت نے بھی خصوصی عدالت کو فیصلہ سنانے سے روکنے کے لیے اسلام آباد ہائی کورٹ سے رجوع کیا تھا۔جس پر 27 نومبر کو ہونے والی سماعت میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے خصوصی عدالت کو سنگین غداری کیس کا فیصلہ سنانے سے روک دیا تھا۔درخواستیں دائر ہونے کے بعد اسلام آباد کی خصوصی عدالت نے پرویز مشرف کے خلاف فیصلہ نہیں سنایا تھا اور سابق صدر کو حکم دیا تھا کہ وہ 5 دسمبر تک اپنا بیان ریکارڈ کروائیں اور مذکورہ کیس کی سماعتیں 4 دسمبر تک یومیہ بنیادوں پر کی گئیں اور 4 دسمبر کو عدالت نے کیس کی سماعت 10 دسمبر تک ملتوی کردی۔

نواز شریف باہر جاسکتے ہیں تو زرداری کا بھی حق ہے، شیخ رشید

راولپنڈی(ویب ڈیسک) وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ اگر نواز شریف باہر جاسکتے ہیں تو زرداری کا بھی حق ہے۔تفصیلات کے مطابق وزیر ریلوے شیخ رشید احمد نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نواز شریف باہر جاسکتے ہیں تو زرداری کا بھی حق ہے، بلاول جگ جگ پنڈی آئیں راستے میں پلکیں بچھائیں گے پھول کا فیشن پرانا ہوگیا۔شیخ رشید نے کہا کہ سابق صدر پرویز مشرف کو غدار سمجھتا ہوں نہ ہی کرپٹ سمجھتا ہوں۔وزیر ریلوے نے کہا کہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع کے لیے سادہ اکثریت چاہیے جو موجود ہے۔شیخ رشید احمد نے کہا کہ اسکوٹر بیچ کر ریشم کا کاروبار شروع کیا، بینک سے قرض لیتا تو صنعتکار بن جاتا اور بعد میں معاف کرالیتا۔واضح رہے کہ اس سے قبل شیخ رشید کا کہنا تھا کہ عمران خان کی قیادت میں بہتری کی طرف بڑھ رہے ہیں، عالمی اداروں نے پاکستان کی معیشت میں بہتری کا اعتراف کیا ہے۔وزیر ریلوے کا کہنا تھا کہ ایم ایل ون سے راولپنڈی تا کراچی کا سفر صرف 8 گھنٹے ہوجائے گا، ایم ویل ون سے ایک لاکھ ملازمت کے مواقع پیدا ہوں گے۔شیخ رشید کا کہنا تھا کہ راولپنڈی میں چھوٹے موٹے مسئلے لگے رہتے ہیں۔ پاکستان کا بہترین اسپتال راولپنڈی میں بننے جا رہا ہے۔ اس اسپتال میں 14 ا?پریشن تھیٹر ہوں گے۔ وزارت ریلوے کا خسارہ 3 سال میں ختم کریں گے۔

مسئلہ کشمیر پر کوئی ابہام، تقسیم یا کمزوری نہیں، وزیر خارجہ

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ مسئلہ کشمیر کسی سیاسی جماعت کا نہیں پورے پاکستان کا ایشو ہے اور اس مسئلے پر کوئی ابہام، تقسیم یا کمزوری نہیں۔قومی اسمبلی کے اجلاس میں حزب اختلاف کی طرف سے اٹھائے گئے نکات کا جواب دیتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ‘5 اگست کے بھارتی اقدام پر پارلیمنٹ نے متفقہ جواب دیا، کشمیر کے معاملے پر ہم سب ایک ہیں اور اس مسئلے پر کوئی ابہام، تقسیم یا کمزوری نہیں۔’انہوں نے کہا کہ ‘مسئلہ کشمیر کسی سیاسی جماعت کا نہیں پورے پاکستان کا ایشو ہے، حکومت نے کشمیر کے معاملے کو اجاگر کیا ہوا ہے اور مسئلہ کشمیر پر پارلیمان کو آگاہ رکھنے کی ہر ممکن کوشش کی۔’ان کا کہنا تھا کہ ‘بھارتی غیر قانونی اقدام کو حکومت اور اپوزیشن نے مشترکہ طور پر اجاگر کیا جبکہ مسئلہ کشمیر پر بات کرنے پر اپوزیشن کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔’وزیر خارجہ نے اپوزیشن کو دعوت دی کہ وہ اپنی تجاویز دینے کے لیے آگے آئے اور یقین دلایا کہ مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے میں ہر مثبت تجویز کو شامل کیا جائے گا۔شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ ‘اب کشمیر کا معاملہ بین الاقوامی تنازع بن گیا ہے، دنیا نے بھارت کے مو¿قف کو تسلیم نہیں کیا اور بھارت اقوام متحدہ میں اپنے وعدے سے منحرف ہوا۔’انہوں نے کہا کہ ‘کشمیریوں نے دنیا بھر میں بھارتی اقدام کے خلاف احتجاج کیا، یورپی یونین کی پارلیمنٹ میں کشمیر کا معاملہ زیر بحث آیا، اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) نے بھی غیر قانونی بھارتی اقدام کے خلاف مذمتی قرارداد منظور کی، بھارت کے لوگ بھی بھارتی حکومت کے اقدام کی مخالفت کر رہے ہیں اور بھارت کوششوں کے باوجود عالمی رائےعامہ اپنے حق میں کرنے میں ناکام رہا۔’مسلم لیگ (ن) کے رہنما احسن اقبال کا اظہار خیال کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ‘بھارتی قبضے کے باعث کشمیریوں کا جینا حرام ہوگیا ہے، پاکستانی قوم کشمیر کے ساتھ اظہار یکجہتی کر رہی ہے لیکن آج 120 دن گزرنے کے باوجود دنیا نے کشمیر کو نظر انداز کر رکھا ہے۔’انہوں نے مطالبہ کیا کہ وزیر اعظم عمران خاان ایوان کو بتائیں کہ کشمیر پر کیا اقدامات اٹھائے، ہمارے کتنے وزیر دنیا میں کشمیر کے مسئلے کو اجاگر کر رہے ہیں، اسلامی دنیا کا واحد ملک کیوں بے بس ہے؟ ہم بھارت پر دباو¿ کیوں نہیں ڈال رہے؟ان کا کہنا تھا کہ حکومت فوری طور پر سفارتی ایمرجنسی کا آغاز کرے، بھارت کشمیریوں کا معاشی قتل کر رہا ہے اور مجھے لگتا ہے کہ حکومت کشمیر کو نظر انداز کر رہی ہے۔احسن اقبال نے مسئلہ کشمیر پر او آئی سی کی جانب سے کوئی خاص ردعمل نہ آنے پر اسے تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اگر تنظیم اس مسئلے پر اجلاس بلانے پر رضامند نہیں ہوتی تو پاکستان کو فوری طور پر اس کی رکنیت چھوڑ دینی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ‘ہمیں ایسے مردہ فورم کی ضرورت نہیں ہے جو مقبوضہ کشمیر کے معاملے پر ایک اجلاس بھی نہیں بلا سکتا۔’

ٹیسٹ رینکنگ: پاکستان کا کوئی بھی کھلاڑی ٹاپ 10 میں جگہ نہ بناسکا

لاہور (ویب ڈیسک)انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) نے ٹیسٹ کرکٹ کی نئی رینکنگ جاری کردی ہے جس میں ٹیموں کی رینکنگ میں پاکستان آٹھویں نمبر پر ہے جب کہ بلے بازوں میں بابر اعظم 13 ویں اور بولرز میں محمد عباس 18ویں نمبر پر موجود ہیں۔آئی سی سی کی جانب سے جاری کی گئی تازہ ٹیسٹ ٹیموں کی رینکنگ میں بھارت کا پہلا نمبر ہے جب کہ نیوزی لینڈ دوسرے اور انگلینڈ تیسرے نمبر پر براجمان ہے۔جنوبی افریقا چوتھے اور آسٹریلیا پانچویں نمبر پر موجود ہے جب کہ سری لنکا چھٹے اور ویسٹ انڈیز پاکستان سے ایک نمبر اوپر ساتویں پوزیشن پر ہے۔آئی سی سی کی حالیہ رینکنگ میں قومی ٹیم کا نمبر 8 واں ہے جس کے بعد بالترتیب بنگلا دیش اور افغانستان موجود ہیں۔بلے بازوں کی ٹیسٹ رینکنگ میں کوئی بھی پاکستانی بلے باز پہلے 10 کھلاڑیوں میں جگہ نہیں بنا سکا ، بابر اعظم دو درجے ترقی کے ساتھ 13 ویں نمبر پر جگہ بنانے میں کامیاب ہوسکے۔پاکستان کے خلاف حالیہ ٹیسٹ سیریز میں ناقص کارکردگی پر اسٹیون اسمتھ ایک درجہ تنزلی کے بعد دوسرے نمبر پر آگئے ہیں جب کہ کوہلی ایک درجہ ترقی پاکر دوبارہ پہلے نمبر پر آگئے ہیں۔کیوی کپتان کین ولیمسن کی تیسری پوزیشن ہے جب کہ بھارت کے پجارا اور آسٹریلیا کے ڈیوڈ وارنر بالترتیب چوتھے اور پانچویں نمبر پر موجود ہیں۔ پاکستان کیخلاف ٹرپل سنچری کے بعد وارنر کی 12 درجے ترقی ہوئی ہے۔بولرز کی رینکنگ میں بھی کوئی بھی پاکستانی پہلے 10کھلاڑیوں میں جگہ نہیں بناسکا، فہرست میں پاکستان کی جانب سے سب سے اوپر محمد عباس ہیں جن کا 18 واں نمبر ہے۔اس فہرست میں آسٹریلیا کے پیٹ کمنز پہلے نمبر پر موجود ہیں جب کہ جنوبی افریقا کے ربادا دوسرے اور ویسٹ انڈیز کے جیسن ہولڈر تیسرے نمبر پر موجود ہیں۔کیوی بولر نیل ویگنز چوتھے اور بھارت کے جسپریت بمراہ پانچویں نمبر پر موجود ہیں۔ٹیسٹ آل راﺅنڈرز میں یاسر شاہ 17 ویں نمبر پر آگئے یاسر شاہ نے قومی بلے بازوں کو بتا دیا کہ وکٹ پر کیسے رکنا ہے۔ٹیسٹ آل راو¿نڈرز کی فہرست میں بھی پہلے دس ناموں میں کسی بھی پاکستانی آل راو¿نڈر کا نام شامل نہیں البتہ آسٹریلیا کے خلاف ٹیسٹ سنچری بنا کر یاسر شاہ 17 ویں نمبر پر آگئے ہیں۔پہلے نمبر پر ویسٹ انڈین قائد جیسن ہولڈر موجود ہیں جب کہ بھارت کے رویندرا جدیجا دوسرے اور بین اسٹوکس تیسرے نمبر پر موجود ہیں۔

ایک سال کے دوران کھانے پینے کی اشیاءکی قیمتوں میں 16.53 فیصد اضافہ

کراچی(ویب ڈیسک) وفاقی ادارہ شماریات کے اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ ایک سال کے دوران کھانے پینے کی اشیاءکی قیمتوں میں 16.53 فیصد اضافہ ہوا ہے۔وفاقی ادارہ شماریات کے مطابق نومبر میں افراطِ زر کی شرح میں نومبر 2018 کے مقابلے میں 12.28 فیصد اضافہ ہوا جب کہ اکتوبر 2019 کے مقابلے میں مہنگائی 1.20 فیصد بڑھ گئی ہے اور کھانے پینے کی اشیائ کی قیمتوں میں ایک سال کے دوران 16.53 فیصد اضافہ ہوا ہے۔وفاقی ادارہ شماریات کے اعداد و شمار کے مطابق گندم 18 فیصد، آٹا 17.41 فیصد، گوشت کی قیمت 10.40فیصد، مرغی 11.98 فیصد، مچھلی 11.33 فیصد، تازہ دودھ 8.11 فیصد مہنگا ہوا جب کہ خوردنی تیل 14.12 فیصد اور گھی کی قیمت میں 16.47 فیصد اضافہ ہوا۔اعداد و شمار کے مطابق مسور کی دال کی قیمت 18.20 فیصد، مونگ کی دال 56.89 فیصد، ماش کی دال 35.13 فیصد اور چنے کی دال 15 فیصد مہنگی ہوئی، ایک سال میں پیاز کی قیمت 159 فیصد اور ٹماٹر کی قیمت میں 376 فیصد کا اضافہ ہوا جب کہ دیگر تازہ سبزیاں بھی 37.73 فیصد مہنگی ہوگئیں۔وفاقی ادارہ شماریات کا کہنا ہے کہ ایک سال کے دوران مکانات کے کرائے 9.68 فیصد بڑھ گئے، بجلی کے بلوں میں اوسطاً 3.68 فیصد، گیس کے نرخ 13.43 فیصد اور مٹی کے تیل کی قیمت میں 30.90 فیصد اضافہ ہوا۔وفاقی ادارہ شماریات کی جانب سے جاری اعداد و شمار کے مطابق ایک سال کے دوران ادویات کی قیمت میں 10.74 فیصد، طبی آلات کی قیمت 7.21 فیصد اور ڈاکٹروں کی فیس میں 13.33 فیصد اضافہ ہوا جب کہ لیبارٹری ٹیسٹ کی فیسوں میں 7.52 فیصد اضافہ دیکھنے میں آیا۔ اسی طرح موٹر وہیکل ٹیکس، پیٹرول اور گاڑیوں کی قیمتوں میں اضافے سے ٹرانسپورٹ کے اخراجات 7.21 فیصد تک بڑھ گئے ہیں۔