Tag Archives: shahid khakaan abbasi

تنقید کرنے والے بتائیں وہ ٹیکس بھی دیتے ہیں یا نہیں، وزیراعظم

خاران(ویب ڈیسک ) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ ہماری نئی ٹیکس اسکیم پر تنقید کرنے والے بتائیں وہ ٹیکس بھی دیتے ہیں یا نہیں۔خاران میں یک مچ خاران شاہراہ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کے دوران وزیر اعظم نے کہا کہ نواز شریف ترقی کا دوسرا نام ہے، ترقی جھوٹے وعدوں سے نہیں ہوتی، بلوچستان معدنی وسائل سےمالامال صوبہ ہے، 2013 سے پہلے بلوچستان میں بڑے بڑے منصوبے التوا کا شکار تھے، مسلم لیگ (ن) نے بلوچستان کی ترقی کے لئے جتنی کوششیں کیں اس کی مثال نہیں ملتی ، ہم نے ہمیشہ اس علاقے میں ترقی کی کوشش کی جس کو ضرورت ہو، آج بلوچستان میں بہترین شاہراہوں کا جال بچھایا جارہاہے، وہ وقت دور نہیں جب بلوچستان ملک کا امیر ترین صوبہ ہوگا۔شاہد خاقان عباسی نے مزید کہا کہ پاکستان میں جمہوریت ہے اور رہے گی، ملک میں امن کے لیے فوج نے اپنی بھرپور کوششیں کیں اور اس کے لیے قربانیاں دیں، جس کی وجہ سے آج ملک میں امن ہے، ہمیں امن کے ساتھ ترقی کے عمل کو برقرار اور جاری رکھنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جولائی میں آئندہ 5 سال کے لیے پاکستان کے مستقبل کا فیصلہ ہوگا،ملک میں ایک طرف اس وقت گالیوں اور الزامات کی سیاست ہے تو دوسری طرف سچ اور خدمت کی سیاست ہے، گالیوں کی سیاست کو پاکستان کے عوام رد کرچکے ہیں اور جولائی میں بھی رد کریں گے۔وزیر اعظم نے کہا کہ وسائل کے بغیر ترقی ممکن نہیں ، وسائل کے لیے ٹیکس اصلاحات لائی جارہی ہیں، مسلم لیگ (ن)کی حکومت نے ٹیکس شرح کو آدھے سے بھی کم کردیا ہے ، ہم نے ٹیکس شرح کم کی تاکہ لوگ انکم ٹیکس اداکریں، تنقید کرنے والے بتائیں وہ ٹیکس دیتے ہیں یا نہیں۔

سیاستدانوں کا فیصلہ عوام کو کرنا ہے، وزیراعظم شاہد خاقان عباسی

کرک(ویب ڈیسک)وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ عام انتخابات آنے والے ہیں جس میں سیاستدانوں کا فیصلہ عوام نے کرنا ہے۔وزیراعظم کا کرک میں نیشپا تیل و گیس اور ایل پی جی منصوبے کا افتتاح کرنے کے بعد تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ منصوبےسےاوجی ڈی سی ایل کوسالانہ 60ارب روپےکی آمدنی ہوگی، منصوبےمیں42 ارب روپےکی رائلٹی ادا کی جاچکی ہے، امید ہے منصوبے سے مقامی آبادی کو گیس کی فراہمی بہتر ہو گی۔انہوں نے بتایا کہ تیل و گیس منصوبے پر 20 ارب روپے لاگت آئی ہے جبکہ منصوبے سے پیدا ہونے والی گیس کی مالیت سالانہ 7 ارب روپے ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ہماری حکومت آئی تو ملک میں گیس اور بجلی کا بحران تھا،یہاں پیداہونےوالی گیس کازیادہ حصہ ضائع ہو رہاتھا،سارے کام رکے ہوئے تھے لیکن آج صورتحال بہتر ہے۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ملک میں 16 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ ہوتی تھی لیکن آج پاکستان اضافی بجلی پیدا کر رہا ہے، لائن لاسز والے علاقوں میں مجبوراً لوڈشیڈنگ کرنا پڑ رہی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ہماری حکومت آئی تو ملک میں 500 کلومیٹر موٹروے تھا، 500کلومیٹر موٹروے بھی (ن) لیگ نے بنایا تھا۔انہوں نے کہا کہ آج 1700 کلومیٹر موٹروے بن رہا ہے، پاکستان کو مشکلات سے نکال کر ترقی کے راستے پر ڈال دیا گیا ہے۔کرک میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ یہ نوازشریف کا وژن تھا جسے پورا کیا جارہا ہے، یہ سب کام پچھلی حکومتیں بھی کرسکتی تھیں لیکن کسی نے بھی ان معاملات کو سدھارنے کیلیے نہیں سوچا۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ آج جو فیصلے ہورہے ہیں ان کی کوئی حیثیت نہیں ہے، عام انتخابات آنے والے ہیں اور فیصلہ عوام کو کرنا ہے کہ وہ ترقی کو ووٹ دینا چاہیں گے یا گالیاں دینے والوں کو ووٹ دیں گے۔اس موقع پر وزیراعظم نے کرک میں انڈس ہائی وے کی دو سڑکوں کو مکمل کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ کرک میں ویمن یونیورسٹی کیمپس بھی بنایا جائے گا۔

فوج اور عدلیہ سے پس پردہ بات چیت بارے وزیر اعظم نے تمام قیاس آرائیوں کا خاتمہ کر دیا

 اسلام آباد(ویب ڈیسک ) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ فوج اور عدلیہ سے کوئی پس پردہ بات چیت نہیں ہورہی، اداروں کے درمیان رشتے آئین نے بنا دیئے ہیں اور اس کے تحت ساری بات چیت سامنے ہی ہوتی ہے۔اسلام آباد میں ملک بھر کے صحافیوں کی نمائندہ تنظیم پی ایف یو جے کے وفد سے ملاقات کے دوران وزیر اعظم نے کہا کہ فوج اور عدلیہ اس ملک کے ادارے ہیں اور سب کا مقصد ملک کی بہتری ہے۔ فوج اور عدلیہ سے کوئی پس پردہ بات چیت نہیں ہورہی، اداروں کے درمیان رشتے آئین نے بنا دیئے ہیں، اس کے تحت ساری بات چیت سامنے ہی ہوتی ہے۔آئندہ عام انتخابات کے بعد مسلم لیگ (ن) کی جانب سے آئندہ وزیر اعظم کے نام پر وزیر اعظم نے کہا کہ شہباز شریف کی بطور وزیراعظم نامزدگی پارٹی فورم پر نہیں ہوئی، نوازشریف نے انہیں میڈیا سے گفتگو میں نامزد کیا ہے۔عدالتی فیصلوں سے متعلق وزیر اعظم نے کہا کہ ملک میں احتساب صرف سیاستدانوں کا ہی ہورہا ہے، عدالتی فیصلے ایسے ہونے چاہیے جنہیں تاریخ میں یاد رکھا جائے اور حوالہ دیا جائے لیکن اب ایسے فیصلے ہو رہے ہیں جن کا تاریخ میں شائد حوالہ نہ دیا جا سکے، کسی کو ایک دن اور کسی کو پوری زندگی کے لئے نااہل قراردیا گیا۔ یہ سب عجیب فیصلے ہیں۔وزیر اعظم نے مزید کہا کہ نگران وزیراعظم کے لئے اچھے نام ذہن میں موجود ہیں، آئین کے تحت اسمبلی کی مدت ختم ہونے سے ایک ماہ قبل قائد حزب اختلاف سے مشاورت شروع کی جائے گی۔ سیاست کے فیصلے عدالتوں میں نہیں عوام میں ہوتے ہیں، عوام جس جماعت کے حق میں فیصلہ کریں گے وہ حکومت بنا لے گی، عام انتخابات میں ہر امیدوار کامیابی کے لئے اپنا اپنا زور لگائے گا، ہم نے بہت کام کئے ہیں اس لئے ہمیں الیکشن میں کامیابی کی توقع ہے۔پرویز رشید اور چوہدری نثار کے درمیان اختلافات کے حوالے سے شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ نواز شریف کے ہوتے ہوئے پارٹی میں کوئی تنازع ہوتا ہی نہیں تھا، چوہدری نثار اور پرویز رشید پارٹی کے اہم رہنما ہیں ، ان کی جانب سے دیئے گئے بیانات کوئی مسئلہ نہیں، اختلافات تو گھر میں بھی ہو جاتے ہیں اور یہ مسئلہ حل ہو جائے گا۔

پاکستان دہشتگردی کیخلاف سب سے بڑی جنگ لڑرہا ہے: وزیراعظم

سیالکوٹ(ویب ڈیسک) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہےکہ کوئی مانے نہ مانے پاکستان دہشت گردی کے خلاف دنیا کی سب سے بڑی جنگ لڑرہاہے۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی سیالکوٹ ایئرپورٹ کے انٹرنیشنل ٹرمینل کا افتتاح کرنے پہنچے تو وزیر خارجہ خواجہ آصف نے ان کا استقبال کیا۔وزیراعظم نےسیالکوٹ ایئرپورٹ پر انٹرنیشنل ٹرمینل کا افتتاح کیا تو اس موقع پر وزیر خارجہ خواجہ آصف، وزیر داخلہ احسن اقبال اور مشیر برائے ہوابازی سردار مہتاب عباسی بھی موجود تھے۔بعد ازاں افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ایئرپورٹ کا انٹرنیشنل ٹرمینل اس علاقے کے لیے سنگ میل ہے جب کہ ترقیاتی منصوبے علاقے کی قسمت بدلیں گے۔انہوں نے کہا کہ یہ موٹرویز اتنی ترقی دیں گے جو توقع سے باہر ہے، یہ نواز شریف اور (ن) لیگ کی محنت و وژن ہے، ورنہ اس سے پہلے حکومتیں پانچ سال سوچتی تھیں اور  وقت ختم جاتا تھا لیکن اس حکومت نے کام سوچے، شروع کیے اور پھر ختم بھی کیے۔شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ نندی پور پروجیکٹ 2006 میں شروع ہوا، بدنامی ہماری ہوئی اور پورا ہم نے بھی ہم نے کیا، کسی کو توقع نہیں تھی، زنک آلود مشینری تھی اور کرپشن کا انبار تھا لیکن آج یہی پروجیکٹ بجلی پیدا کررہا ہے۔وزیراعظم نے مزید کہا کہ حکومت نے 10 ہزار میگاواٹ کے منصوبے شروع ہوئے اور مکمل کیے، یہ پاکستان کے لیے ہمارا حصہ ہے، یہ صرف باتیں نہیں، بجلی کا بڑا بحران اگلے 15 سال کے لیے حل ہوچکا ہے، پوری امید ہے بجلی کی قیمت بھی کم ہوگی۔ان کا کہنا تھا کہ جب حکومت آئی تو ملک میں گیس نہیں تھی، انڈسٹری اور پلانٹس بند تھے، گھروں میں گیس کی قلت تھی لیکن آج ہر ایک کو جتنی گیس چاہیے وہ مل رہی ہے۔شاہد خاقان عباسی نے کہ کہا کہ پچھلے چار پانچ سال میں انتشار پھیلانے کی کوشش کی گئی، مشکلات کے باوجود اور اس کی پرواہ کیے بغیر کام کیے جس کا نتیجہ سامنے ہے۔سیالکوٹ چیمبر آف کامرس میں تاجروں اور صنعت کاروں سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ جو پچھلے چار پانچ سال میں ہوا وہ کسی معجزے سے کم نہیں، نواز شریف کی جو وژن تھی اس پر عملدرآمدکیا گیا۔انہوں نے کہا کہ جس قسم کے ہمارے سیاسی حالات ہیں اور جو سیاسی ریکارڈ رہا، حکومت کرنا کہیں بھی آسان نہیں اور پاکستان میں یہ بہت مشکل کام ہے۔شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ پاکستان وہ ملک تھا جہاں جمعہ کی نماز میں خوف میں مبتلا ہوتے تھے لیکن بڑی قربانیاں دے کر دہشت گردی کے ناسور کو ختم کیا، آج امن و امان موجود ہے، کراچی دنیا کے پانچ خطرناک شہروں میں تھا لیکن آج شہر امن کا گہوارا ہے، تمام سیاسی لوگوں، حکومت اور فوج فوج نے مل کر کوشش کی اس کے اثرات سامنے ہیں۔

کوئی غلط فہمی میں نہ رہے ۔۔۔ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے اہم اعلان کر دیا

حسن ابدال(ویب ڈیسک)وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ کوئی غلط فہمی میں نہ رہے حکومت اپنی آئینی مدت پوری کرے گی اور 2018 میں بھی مسلم لیگ (ن) کی حکومت بنے گی۔ہزارہ موٹروے سیکشن کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ آج کا دن ہزارہ کے لیے بہت اہم ہے، موٹروے منصوبہ علاقے کی تقدیر بدل دے گا، منصوبے پر 33 ارب روپے خرچ کیے گئے، اس منصوبے کے بارے میں سنا بھی نہیں تھا لیکن نوازشریف نے کہا یہ منصوبہ بنے گا، نواز شریف نے صرف وعدے نہیں کام کرکے دکھایا۔ ان کا کہنا تھا کہ ماضی کے حکمران بتائیں کہ وسائل کہاں خرچ ہوئے، 9 سال کے مشرف اور آصف زرداری کے دور حکومت کا کوئی ایک بھی منصوبہ دکھادیں۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ خیبرپختونخوا حکومت نے صوبے میں کون سے وسائل استعمال کیے اور وہاں کون سی تبدیلی آئی، ہم نے شرافت کی سیاست کی اور صرف کام کیا، ہم نے الزام تراشیوں اور گالیوں کا جواب کارکردگی سے دیا، آپ خود فیصلہ کرلیں کہ آپ کو کام کرنے والے چاہئیں یا گالیاں دینے والے جب کہ گزشتہ ایک سال میں انتشار سے ملک کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا۔ ان کا کہنا تھا کہ سیاست کے فیصلے عدالتوں میں نہیں ہوتے، کوئی غلط فہمی میں نہ رہے حکومت اپنی آئینی مدت پوری کرے گی اور 2018 میں بھی مسلم لیگ (ن) کی حکومت بنے گی، جمہوریت پر شب و خون مارنے والے اور روز حکومت گرانے کی باتیں کرنے والے شرمندہ ہوں گے۔

حلقہ بندیوں پر ڈیڈ لاک ختم

اسلام آباد (این این آئی) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیرصدارت پارلیمانی رہنماو¿ں کے اجلاس میں حلقہ بندیوں سے متعلق بل پر ڈیڈ لاک ختم کرلیا گیا اور بل کو 19 دسمبر کو سینٹ میں پیش کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ جمعہ کو وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے گزشتہ روز پارلیمانی جماعتوں کے رہنماو¿ں کو ناشتے پر مدعو کیا جس میں شرکت کےلئے بعض جماعتوں کے رہنما وزیراعظم ہاو¿س پہنچے جبکہ حکومت کے اہم اتحادی مولانا فضل الرحمان اور محمود خان اچکزئی اجلاس میں شرکت کےلئے نہیں پہنچے۔وزیراعظم کی پارلیمانی رہنماو¿ں سے ناشتے کی میز پر اہم امور پر مشاورت ہوئی جس کے بعد وزیراعظم کی سربراہی میں پارلیمانی رہنماو¿ں کا اجلاس ہوا۔اجلاس میں پیپلزپارٹی، جماعت اسلامی، ایم کیوایم پاکستان، عوامی مسلم لیگ کے رہنما شریک ہوئے جبکہ تحریک انصاف ¾جے یو آئی (ف) اور پشتونخوا میپ سے کسی نے اجلاس میں شرکت نہیں کی۔وزیراعظم کی سربراہی میں ہونے والے اس اہم اجلاس میں حلقہ بندیوں کے بل ¾ فاٹا اصلاحات بل اور مردم شماری پر اپوزیشن کے تحفظات پر بات چیت کی گئی۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں حلقہ بندیوں سے متعلق بل پر ڈیڈ لاک ختم ہوگیا اور اس حوالے سے تمام تحفظات دور کرنے پر اتفاق ہوا ہے جس کے بعد بل کو 19 دسمبر کو سینٹ میں پیش کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔نجی ٹی وی کے مطابق حلقہ بندیوں کے معاملے کا جائزہ اور اس کے حل کےلئے 4 رکنی کمیٹی بنادی گئی ہے جس میں سنیٹر مشاہد اللہ، میر حاصل بزنجو، تاج حیدر اور مشاہد حسین سید شامل ہوں گے۔ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ فاٹا اصلاحات بل کے معاملے پر پارلیمانی رہنماو¿ں کا ایک الگ اجلاس بلایا جائےگا جو آئندہ ایک دو روز میں ہی طلب کیے جانے کا امکان ہے۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں شریک پیپلزپارٹی کے رہنما اعتزاز احسن نے بتایا کہ مردم شماری اور حلقہ بندیوں کا معاملہ احسن طریقے سے طے کرلیا گیا ہے ¾اس بات پر اتفاق ہوا ہے کہ اس حوالے بنائی گئی چار رکنی کمیٹی میں پانچویں رکن پختونخوا ملی عوامی پارٹی کے عثمان کاکڑ ہوں گے۔اعتزاز احسن کے مطابق اس حوالے سے جو بھی اعتراضات ہوں گے اسے جلد از جلد ایک سے دو ہفتوں میں حل کیا جائےگا جبکہ وزیراعظم نے خود اس کی نگرانی کا اعلان کیا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں کہا گیا کہ جیسے ہی حلقہ بندیوں کا بل 19 دسمبر کو سینیٹ سے منظور ہوگا اس کے بعد الیکشن شیڈول کا اعلان کردیا جائے گا اور الیکشن وقت پر ہی ہوں گے۔

وزیراعظم کی ایم کیو ایم کے وفد کو وعدوں پر عمل کی یقین دہانی

 اسلام آباد: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ حکومت نے کراچی کی ترقی کے لئے ریکارڈ پیکج منظور کیا ہے اور سابق وزیراعظم نواز شریف کے تمام وعدے پورے کیے جائیں گے۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی سے ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ فاروق ستار کی قیادت میں وفد نے ملاقات کی جس میں کراچی اور حیدرآباد کے ترقیاتی پیکج کا جائزہ لیا گیا اور فنڈز کا اجراء ماہ رواں میں یقینی بنانے کا فیصلہ کیا گیا  جب کہ وزیر اعظم نومبر میں حیدر آباد یونیورسٹی کا سنگِ بنیاد بھی رکھیں گے، ملاقات میں ایم کیو ایم پاکستان کے وفد نے کے ایم سی کے حوالے سے حکومت سندھ کے عدم تعاون کی شکایت بھی کی۔اس موقع پر وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ کراچی پاکستان کا اقتصادی دارالخلافہ ہے جس کوامن اور خوشحالی کا گہوارہ بنانا ہمارا مشترکہ ہدف ہے۔ حکومت ملک میں ہر سطح کے منتخب جمہوری اداروں کا احترام کرتی ہے، بلدیاتی اداروں کا ملک کی ترقی میں اہم کردار ہے جس کے لئے صوبائی حکومت کی توجہ مبذول کرائی جائے گی کیونکہ شراکتی جمہوریت ہی جمہوری استحکام کی ضمانت ہے۔ حکومت نے کراچی کی ترقی کے لئے ریکارڈ پیکج منظور کیا ہے اور سابق وزیراعظم نواز شریف کے تمام وعدے پورے کیے جائیں گے۔ایم کیو ایم پاکستان کے وفد سے ملاقات میں پاکستان میں جمہوریت کی مضبوطی کے لئے تمام جمہوری قوتوں کو اپنے اختلافات بالائے طاق رکھتے ہوئے اپنا اپنا کردار ادا کرنے پر بھی اتفاق کیا گیا، اجلاس میں اس بات پر بھی اتفاق کیا گیا کہ پاکستان کی ترقی، خوشحالی اور استحکام کے لئے آئین کی بالا دستی اور جمہوری عمل کا تسلسل لازمی ہے، ملک کے تمام مسائل کا حل آئین، قانون اور پارلیمنٹ کی بالادستی میں مضمر ہے اور اس ضمن میں پارلیمان کی آئینی معیاد کا احترام ضروری ہے۔اجلاس میں کراچی کے امن کو ہر قیمت پر یقینی بنائے رکھنے پر بھی اتفاق کیا گیا جب کہ وزیراعظم نے وزیرِ داخلہ کو ہدایت کی کہ مقدمات کے حوالے سے ایم کیو ایم پاکستان کی شکایات کا جائزہ لیا جائے اور انصاف کے تقاضے یقینی بنائے جائیں۔

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے امریکہ کوسخت پیغام دیدیا

اسلام آباد(این این آئی)وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ وہ وقت گزر گیا ہے جب پاکستان اپنی فوجی ضروریات پوری کرنے کے لیے امریکا پر انحصار کرتا تھا ٗہمار ے خلاف کوئی بھی پابندی دہشتگردی کیخلاف جنگ میں کمزورکرتی ہے ٗ دنیا دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستانی کوششوں کااعتراف کرے ۔عرب نیوز کو دئیے گئے انٹرویو میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نےکہاکہ وہ وقت گزر گیا ہے جب پاکستان اپنی فوجی ضروریات پوری کرنے کے لیے امریکا پر انحصار کرتا تھا،دنیا کو پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف قربانیوں کو تسلیم کرنا ہوگا۔وزیراعظم نے کہاکہ پاکستان پر   لگائی جانے والی ہر قسم کی پابندی نہ صرف دہشت گردی کے خلاف جنگ کو متاثر کرے گی بلکہ اس سے خطے میں بھی عدم استحکام پیدا ہوگا۔انہوںنے کہاکہ ہمارے خلافکوئی بھی پابندی دہشتگردی کیخلاف جنگ میں کمزورکرتی ہے ایک سوال پر انہوںنے کہاکہ چاہے جتنی مہنگی پڑے دہشتگردی کے خلاف جنگ ہر حال میں لڑنی ہے انہوںنے کہاکہ ایک ذریعہ ختم ہو جائے تو دوسرے ذرائع کی جانب بڑھنے کے سوا چارہ نہیں ہونا ۔ وزیر اعظم نے کہاکہ ایک بار پر کہاکہ دنیا دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستانی کوششوں کااعتراف کرے ۔

سپریم کورٹ کے فیصلے سے اتفاق نہیں مگر احترام کرتے ہیں، وزیراعظم

کوئٹہ: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ وہ وقت دور نہیں جب بلوچستان ملک کا امیر ترین صوبہ ہوگا۔انہوں نے یہ بات ڈیرہ بگٹی میں کچھی کینال کے افتتاح کے موقع پر کہی، انہوں نے کہا کہ چند سالوں کی بات ہے بلوچستان کےمسائل مکمل طور پر حل ہوں گے۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ 15 ارب روپے کی لاگت سے بلوچستان کے ہر علاقےمیں گیس پہنچائی جائے گی، ہمارا فرض ہے کہ ماضی کی کوتاہیاں دور کریں۔ان کا کہنا تھا کہ ڈیرہ بگٹی کیلیے پینے کے پانی اور گیس کا مسئلہ مستقل طور پر حل کیا جائے گا۔وزیراعظم نے کہا کہ ڈیرہ بگٹی میں 10 کروڑ روپےکی لاگت سے اسپتال اور 11 کروڑ روپے کی لاگت سے ریسکیو سینٹر قائم کیا جائےگا۔ان کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے سے اتفاق تو نہیں مگر اس کا احترام کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج ملک کے حالات آپ کےسامنے ہیں، ملک میں جب انتشار ہوتا ہے تو ترقی کا عمل رک جاتا ہے۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ چار سالوں میں سابق وزیراعظم نواز شریف نے ملک بھر میں موٹر وے کا جال بچھایا، ملک میں اب گیس اور بجلی کی صورتحال بہت بہتر ہے، پانی کے مسائل کے حل کیلیے ایک علیحدہ وزارت قائم کی گئی ہے۔وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ بلوچستان میں پانی کے 200 ارب روپے کے منصوبوں پر کام کیا جائے گا۔کچھی کینال منصوبہ 15سال قبل شروع کیا گیا تھا، اس پر مجموعی طور پر80 ارب روپےکی لاگت آئی جب کہ منصوبے سے تقریباً 72ہزار ایکڑاراضی سیراب ہوگی۔مقامی انتظامیہ نے وزیراعظم کے دورے کے باعث ضلع میں عام تعطیل کا اعلان کیا ہے۔

وزیر اعظم کا بیٹا گرفتار ،تہلکہ خیز انکشافات

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) ڈیفنس کے علاقہ سے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا بیٹا ہونے کا دعویدار جعلساز گرفتار کر لیا گیا۔ پولیس کے مطابق ملزم امجد خود کو وزیراعظم کا بیٹا ظاہر کر کے آئیل ٹینکرز والوں کو پھانسنے کے چکر میں تھا کہ دھر لیا گیا۔ ملزم اس سے قبل کئی وارداتوں میں شہریوں سے بھاری رقوم ہتھیا چکا ہے۔ ملزم کے قبضہ سے مختلف جعلی کارڈز برآمد ہوئے۔ ملزم کہیں خود کو وزیراعظم کا بیٹا اور کہیں کوآرڈینیٹر ظاہر کرتا تھا۔ گوادر میں زمینوں کی لین دین اور کئی محکموں میں ٹرانسفر پوسٹنگ کے فراڈ میں ملوث رہا کروڑوں کی جعلسازی میں ملوث ملزم کو ایف آئی اے پولیس نے گرفتار کیا۔

نامزد وزیراعظم کس حیثیت سے بنایا گیا؟….بات سپریم کورٹ تک جاپہنچی

اسلام آباد(ویب ڈیسک)نامزد وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ شاہد خاقان کو عبوری وزیراعظم نامزد کرنے پر حکم امتناعی جاری کیا جائے۔پاکستان مسلم لیگ(ن) کی جانب سے وزیراعظم کے لیے نامزد امیدوار شاہد خاقان عباسی کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ نواز شریف عدالتی فیصلے کے بعد پارلیمانی اور پارٹی سیاست سے نا اہل ہوگئے لہذا ان کے پاس شاہد خان عباسی کو عبوری وزیراعظم نامزد کرنے کا اختیار نہیں تھا۔درخواست میں موقف اپنایا گیا ہے کہ شاہد خاقان عباسی کے خلاف ایل این جی درآمد کا معاملہ نیب میں زیرالتواءہے، شاہد خاقان نے پیپرا رولز کی خلاف ورزی کر کے ایل این جی کا ٹھیکہ دیا اور خلاف قواعد ایل این جی ٹھیکہ دے کر قومی خزانہ کو نقصان پہنچایا۔