All posts by Asif Azam

https://www.facebook.com/asif.azam.33821

گیس بحران: وزیراعظم کے حکم پر سوئی سدرن اور ناردرن کے بورڈ آف ڈائریکٹرز تحلیل

اسلام آباد( ویب ڈیسک ) وزیراعظم عمران خان نے ملک میں گیس بحران پر مزید سخت اقدامات کرتے ہوئے سوئی سدرن اور ناردرن کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کو تبدیل کرنے کا حکم دے دیا جس پر عملدرآمد کردیا گیا ہے۔ملک میں گیس بحران پر وزیراعظم عمران خان نےگزشتہ روز ہنگامی اجلاس طلب کیا تھا جس میں سوئی سدرن اور ناردرن کے مینیجنگ ڈائریکٹرز کے خلاف تحقیقات کا حکم دیا گیا۔ذرائع کا کہنا ہےکہ اس حوالے سے وزیراعظم عمران خان نے مزید سخت اقدامات کا حکم دیا جس کے تحت سوئی سدرن اور سوئی ناردرن کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کو تبدیل کرنے کا فیصہ کیا گیا۔ذرائع کے مطابق وفاقی حکومت نے وزیراعظم عمران خان کے حکم پر عملدرآمد کرتے ہوئے سوئی سدرن اور ناردرن کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کو فوری تحلیل کردیا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ سوئی ناردرن گیس کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے ارکان کی تعداد 14 اور سوئی سدرن گیس کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی تعداد 11 ہے۔ذرائع کے مطابق دونوں کمپنیوں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کو ناقص کارکردگی پر تبدیل کیا گیا جب کہ دونوں کمپنیوں کے ایم ڈیز کے خلاف پہلے ہی تحقیقات کا آغاز کردیا گیا ہے جو 4 رکنی کمیٹی کررہی ہے، کمیٹی تحقیقات میں بیرونی ماہرین کی خدمات حاصل کرسکتی ہے۔ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم نے دونوں کمپنیوں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی تبدیلی کا فیصلہ وزیر پیٹرولیم اور وزیر توانائی سے مشاورت کے بعد کیا جب کہ سوئی سدرن اور سوئی ناردرن کے نئے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی تشکیل نیپرا کے ساتھ مل کر کرنے کا حکم دیا ہے۔ذرائع کے مطابق دونوں کمپنیوں کے ایم ڈیز کے خلاف تحقیقات کے لیے تشکیل دی گئی تحقیقاتی کمیٹی 72 گھنٹوں میں اپنی سفارشات کے ساتھ رپورٹ وزیراعظم کو پیش کرے گی۔ذرائع کا کہنا ہےکہ وزیراعظم نے حکام کو مزید احکامات دیئے کہ گیس بحران کے حل کے حوالے سے متبادل انتظامات کیے جائیں تاکہ گھریلو صارفین کی مشکالت کو کم کیا جاسکے۔

بھارتی کامیڈین کپل شرما نے بھی شادی کرلی

ممبئی (ویب ڈیسک ) بالی وڈ میں شادیوں کے ٹرینڈ نے ایسا زور پکڑا ہے کہ تھمنے کا نام ہی نہیں لے رہا گزشتہ دنوں دپیکا پڈوکون اور رنویر سنگھ کے ساتھ ساتھ پریانکا چوپڑہ اور نک جونس رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئے اور اب بھارتی اسٹینڈ اپ کامیڈین اور اداکار کپل شرما نے بھی اپنی قریبی دوست سے شادی کرلی ہے۔ایشا امبانی کی ‘مہنگی ترین’ شادی میں نامور شخصیات نے چار چاند لگا دیئے۔کپل شرما گزشتہ روز بھارتی شہر جالندھر میں گنی چتھرا کے ساتھ رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئے، جس میں بھارتی ٹی وی اسٹارز سمیت پنجابی گلوکاروں نے بھی شرکت کی۔کپل شرما نے شادی کی خوبصورت تصویر سوشل میڈیا پر شیئر کی، جس پر پرستاروں کی جانب سے مبارک باد دی جارہی ہے۔ کپل شرما کی شادی کی ایک استقبالیہ تقریب 14 نومبر کو امرتسر میں منعقد کی جائے گی جب کہ 24 دسمبر کو ممبئی میں ہونے والی دوسری استقبالیہ تقریب میں فلم انڈسٹری کے ستارے شرکت کریں گے۔ کپل شرما نے اپنی دوست گنی چتھرا کو گزشتہ برس سب سے متعارف کروایا تھا، ہندوستان ٹائمز کو دیئے گئے ایک انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ ‘انہیں محسوس ہوتا ہے کہ شادی ان کی زندگی میں بڑی اور مثبت تبدیلی لائے گی’۔

آصف زرداری اور بلاول کا نیب کے سامنے پیش نہ ہونیکا فیصلہ

کراچی (نمائندہ خصوصی) پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے اہم اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ پارٹی قائدین بلاول بھٹو اور آصف علی زرداری نیب کے سامنے پیش نہیں ہونگے۔بلاول بھٹو زرداری کے زیر صدارت پیپلز پارٹی کا کراچی میں اہم اجلاس ہوا جس میں سید خورشید شاہ، نیئر حسین بخاری، قائم علی شاہ، قمر الزماں کائرہ، مخدوم احمد محمود اور نثار احمد کھوڑو سمیت پارٹی کے اہم رہنماو¿ں نے شرکت کی۔اس موقع پر اجلاس سے خطاب میں بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کبھی بھی اپنے نظریے اور جدوجہد پر مصلحت کا شکار نہیں ہوئی، ہم آمروں اور ان کے حواریوں کے مظالم کا سامنا کرتے رہے ہیں اور کرتے رہٰں گے۔اجلاس کے بعد جاری اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ کٹھ پتلیوں کو اقتدار میں لانے کے لیے شرمناک ڈرائی کلیننگ مہم چلائی گئی، کٹھ پتلی سرکار عوام کو نوکریاں دینے کے بجائے ہزاروں لوگوں کو بے روزگار کر رہی ہے۔پیپلز پارٹی اعلامیہ میں کہا گیا کہ حکومت نے حزب اختلاف کی جماعتوں کو انتقامی کارروائیوں کا نشانہ بنانے کی مہم شروع کر رکھی ہے، تحریک انصاف کی حکومت جعلی اور سطحی منصوبوں کے ڈھول بجا رہی ہے، حکومت کی پالیسیوں نے مہنگائی کو آسمان پر پہنچا دیا ہے اور قومی معیشت کو بربادی کے سمندر میں ڈبکیاں لگانے پر مجبور کر دیا گیا ہے۔دنیا نیوز ذرائع کے مطابق پیپلز پارٹی کے اہم اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ بلاول بھٹو اور آصف زرداری قومی احتساب بیورو (نیب) کے سامنے پیش نہیں ہونگے، دونوں قائدین کی جگہ ان کے وکلا کی ٹیم پیش ہوگی۔ پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنماﺅں نے کہاکہ نیب کٹھ پتلی ادارہ بن گیا ہے جسے حکومت پیپلزپارٹی اوراپوزیشن پارٹیوں کے خلاف آلہ کارکے طورپراستعمال کررہی ہے ۔اجلاس میں 27 دسمبر کو گڑھی خدا بخش کے جلسے کی تیاریوں کا جائزہ بھی لیا گیا۔ اجلاس میں نیئر حسین بخاری، قائم علی شاہ، خورشید احمد شاہ، قمرالزمان کائرہ،مخدوم احمد محمود، نثارکھوڑو، لطیف اکبر، علی مدد جتک، ھمایوں خان وقار مہدی اور دیگر رہنما بھی شریک ہوئے۔پیپلزپارٹی کے رہنماﺅں نے کہاکہ نیب نے اپنی غیر جانبداری کے تابوت میں آخری کیل ٹھونک دی ہے نیب اور ایف آئی اے کو پیپلزپارٹی اوراپوزیشن کے خلاف روبوٹ کی طرح استعمال کیا جا رہا ہے ،پیپلز پارٹی نے چار آمروں کو شکست دی ہے آصف زرداری بھی نہ ڈرے گا، نہ جھکے گا نہ تھکے گا۔پیپلزپارٹی چیئرمین نے اجلاس میں شریک رہنماﺅں کی آرا سے اتفاق کیا کہ قوم کے اجتماعی فیصلے کے خلاف اپنی کٹھ پتلیوں کو اقتدار میں لانے کے لیئے شرمناک ڈرائی کلیننگ مہم چلائی گئی اور اس کے بعد تحریک انصاف کی حکومت نے حزب اختلاف کی جماعتوں اور خصوصا پاکستان پیپلز پارٹی کو انتقامی کاروائیوں کا نشانہ بنانے کی مہم شروع کر رکھی ہے۔ اجلاس نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت جعلی اور سطحی منصوبوں کے ڈھول تو بجا رہی ہے لیکن درحقیقت اس کی کمزور و بے سمت پالیسیوں نے مہنگائی کو آسمان پر پہنچا کر قومی معیشت کو بربادی کے سمندر میں ڈبکیاں لگانے پر مجبور کر دیا ہے۔ اجلاس نے تحریک انصاف کی حکومت کی جانب سے حددخلیوں کے خلاف جاری ظالمانہ کاروائیوں پر تشویش کا اظہار کیا جس کے دوران داد رسی و تلافی کی کسی منصوبہ بندی کے بغیر فقط غریب لوگوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے اور جس کے نتیجے میں ہزاروں پاکستانی اپنی روزی روٹی کمانے کے ذرائع سے محروم ہو رہے ہیں۔ اجلاس میں شریک رہنماﺅں نے کہاکہ کٹھ پتلی سرکار عوام کو نوکریاں دینے کے بجائے ہزاروں لوگوں کو بے روزگار کر رہی ہے۔ چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ماضی میں پاکستان پیپلز پارٹی کی قیادت آمروں اور ان کے حواریوں کے ہاتھوں ہونے والے مظالم کا سامنا کرتی رہی لیکن کبھی بھی اپنے نظریئے اور اس جدوجہد پر مصلحت کا شکار نہیں ہوئی، جس کا مقصد عوام کو غیرجمہوری اور جعلی جمہوریت پسندوں کے ہاتھوں جاری استحصال کا خاتمہ ہے۔ اجلاس کے دوران شہید محترمہ بینظیر بھٹو کے 11 ویں یوم شہادت کے سلسلے میں 27 دسمبر کو گڑھی خدا بخش میں ہونے والے جلسہ عام کی تیاریوں کا بھی جائزہ لیا گیا۔اجلاس کے بعد صحافیوں کوتفصیلات بتاتے ہوئے پیپلزپارٹی سندھ کے سیکریٹری جنرل وقارمہدی نے کہا کہ27 دسمبر کو بی بی شہید بے نظیربھٹو کی برسی منعقد کی جارہی ہے،برسی کے لئے بھرپور تیاری کی جارہی ہے 26 دسمبر کو ملک بھر سے قافلے لاڑکانہ کے لئے روانہ ہونگے،27 دسمبر کوشہید بے نظیر بھٹو کو خراج عقیدت پیش کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو زرداری کے وکیل احتساب عدالت میں پیش ہونگے اورجواب داخل کرائیں گے نیب کے احتساب سے ڈرنے والے نہیں ،پی پی کی حکومت کو ہٹایا گیا رہنماﺅں کو عدالتوں میں گھسیٹا گیا،زرداری صاحب نے گیارہ سال قید و بند کی صعوبتیں برداشت کی ہیں اوراب بھی وہ حالات کا مقابلہ کرنے کے لیے تیارہیں ۔

وزیراعظم کا گیس کے بحران پر نوٹس ، اہم حکمنانہ جاری کر دیا

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک+ نیوز ایجنسیاں) وزیر اعظم عمران خان نے ملک میں گیس کے مصنوعی بحران کا سختی سے نوٹس لیتے ہوئے نااہلی کا مظاہرہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا حکم دے دیا۔ 72گھنٹے میں رپورٹ طلب کرلی۔ اسلام آباد میں وزیراعظم کی زیر صدارت ملک میں گیس بحران سے متعلق اجلاس ہوا، وزیر پٹرولیم کی جانب سے گیس کےحالیہ بحران پرتفصیلی بریفنگ دی گئی۔بریفنگ میں بتایا گیا کہ حالیہ گیس بحران کی ذمہ داری ایس این جی پی ایل، ایس ایس جی سی پرعائد ہوتی ہے، وزیراعظم نے کمپریسرز سے متعلق معلومات پوشیدہ رکھنے پر سخت برہمی کا اظہار کیا اور واقعے کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ایس این جی پی ایل، ایس ایس جی سی میں نااہلی کا مظاہرہ کرنے والوں کیخلاف کارروائی کا حکم دے دیا۔ وزیراعظم نے وزیرپٹرولیم کو دونوں اداروں کے منیجنگ ڈائریکٹرزکے خلاف فوری انکوائری کر کے72گھنٹے میں مکمل رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کر دی۔ اس کے علاوہ وزیر اعظم نے صارفین کی سہولت کے لئے گیس کی طلب اور رسد کیلئے منصوبہ بندی مربوط بنانے کی ہدایت بھی دی۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ مربوط منصوبہ بندی کریں تاکہ عوام کو آئندہ ایسی صورت حال کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ واضح رہے کہ کراچی میں گزشتہ تین روز سے جاری گیس کا بحران مصنوعی نکلا، سندھ کی گیس پنجاب کو فراہم کرنے کا انکشاف ہوا ہے، پی پی ایل کے ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ گمبٹ گیس فیلڈ میں کوئی خرابی نہیں ہے بلکہ گیس بحران کی اصل وجہ آر ایل این جی ٹرمینل میں خرابی ہے۔ذرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ ٹرمینل ایف ایس آریومیں کام جاری ہےجس سے گیس فراہمی رکی اور ایس ایس جی سی گیس پنجاب کو فراہم کررہی ہے۔ گیس دوسرے صوبے کو فراہم کرنے کی وجہ سے کراچی میں مصنوعی بحران پیدا ہوا ہے۔ یہ بھی بتایا جارہا ہے کہ گمبٹ اور کنر پساکھی فیلڈ سو فیصد پیداوار کررہی ہیں۔ وزیر اعظم نے سوئی سدرن اور سوئی نادرن کے ایم ڈیز کیخلاف تحقیقاتی کارروائی 72 گھنٹے میں مکمل کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ وزیر پیٹرولیم تحقیقات مکمل کرکے رپورٹ پیش کریں۔ واضح رہے کہ سوئی سدرن گیس کمپنی نے ایک ہفتے سے گیس فیلڈز میں خرابی کا دعویٰ کیا ہے جس سے انڈسٹریز اور رہائشی علاقوں میں گیس کی سپلائی بری طرح متاثر ہے۔ایک ہفتے کے دوران سندھ بھر میں 4 دن سی این جی اسٹیشنز بھی بند رہے اور سوئی سدرن نے غیرمعینہ مدت تک سی این جی اسٹیشنز کو گیس سپلائی بند کردی ہے۔سی این جی اسٹیشنز کو گیس کی سپلائی بند ہونے سے کراچی ٹرانسپورٹ اتحاد نے بسیں نہ چلانے کا اعلان کیا ہے جس سے شہر میں پبلک ٹرانسپورٹ غائب ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ سی پیک بلوچستان میں خوش حالی اور مواقع لائے گا۔ان خیالات کا اظہار وزیراعظم نے کیڈٹ کالج قلعہ سیف اللہ کے طلبا و طالبات سے ملاقات کے موقع پر کیا، ملاقات میں وزیربرائے دفاعی پیداوار زبیدہ جلال بھی موجود تھیں۔سابق حکومتوں کی وجہ سے بلوچستان پسماندگی کا شکار رہا، جہاں بھی کرپشن ہوگی عوام کی حالت ابتر رہے گی۔اس موقع پر وزیراعظم نے کہا کہ سابق حکومتوں کی وجہ سے بلوچستان پسماندگی کا شکار رہا، جہاں بھی کرپشن ہوگی عوام کی حالت ابتر رہے گی۔وزیراعظم نے کہا کہ نئے بلدیاتی نظام میں ترقیاتی فنڈ دیہات کی سطح پرملیں گے، بلوچستان میں قلت آب پرقابو پانے کے لئے منصوبوں پر کام کر رہے ہیں۔اس موقع پر وزیراعظم نے کہا کہ سی پیک سے بلوچستان میں خوش حالی آئے گی اور روزگار ملے گا۔ یاد رہے کہ گزشتہ روز وزیراعظم عمران خان سے کیڈٹ کالج مستونگ کے طلباءنے وزیراعظم آفس میں ملاقات کی تھی۔اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بلوچستان کی تعمیر و ترقی اور وہاں کے طالب علموں کو تعلیم کے مواقع فراہم کریں گے۔

7 لیگی ارکان اسمبلی نے این آر اومانگا میں نے جواب دیدیا : مراد سعید

اسلام آباد( آئی این پی) قومی اسمبلی میں وزیر مملکت برائے مواصلات مراد سعید نے انکشاف کیا ہے کہ مجھ سے مسلم لیگ(ن) کے 7 رہنماو¿ں نے این آر او مانگا ہے لیکن مقدمات چلتے رہیں گے، این آر اور کے لیے سب سے پہلے جس نے مجھ سے رابطہ کیا وہ اس ایوان میں موجود ہے،میں یہ قرار داد پیش کر تا ہوں کہ جس نے اس قوم کا ایک پیسہ بھی لوٹا ہے اسے ڈی چوک پر پھانسی دی جائے اور ایسے لوگوں کے اثاثے نیلام کیے جائیں، اپوزیشن ارکان کے مطالبے کے باوجود مراد سعید نے این آر او مانگنے والے 7ارکان کے نام نہ بتائے ۔ قومی اسمبلی کے اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے مراد سعید نے کہا کہ جب بھی اجلاس کی کاروائی شروع ہوتی ہے تو اپوزیشن لیڈر آتے ہیں اور پھر نیب اور اداروں پر تنقید ہو تی ہے ، کیا اپوزیشن پر مقدمات ہمارے دور میں بنے ؟، کیا صاف پانی اور آشیانہ کا بڑا سکینڈل نہیں ہے مراد سعیدنے کہا کہ میں یہ قرار داد پیش کر تا ہوں کہ جس نے اس قوم کا ایک پیسہ بھی لوٹا ہے اسے ڈی چوک پر پھانسی دی جائے اور ایسے لوگوں کے اثاثے نیلام کیے جائیں، کیا سب اس سے اتفاق کرتے ہیں ، اس موقع پر اپوزیشن ارکان نے آوازیں لگائیں کہ علیمہ خان سے شروع کریں ، مراد سعید نے کہا کہ ٹرمپ پاکستان سے مدد مانگ رہا ہے اس پر بات ہونی چاہیے ، وزیر اعظم نے لوگوں کو شلٹر ہوم بنا کر دیئے ، آپ رسیدیں دے دیتے تو بات ہی ختم ہو جاتی ، مراد سعید نے کہا کہ میں نے ایک منصوبے سے 46کروڑ کی ریکوری بھی کر دی ہے ، مراد سعید نے انکشاف کیا کہ مجھ سے مسلم لیگ( ن) کے 7رہنماﺅں نے این آر او مانگا لیکن کیسز چلیں گے این آر اور کے لیے سب سے پہلے جس نے مجھ سے رابطہ کیا وہ اس ایوان میں موجود ہے ۔انہوں نے کہا کہ میں اپنی قوم سے وعدہ کرکے آیا ہوں کہ پاکستان سے کرپشن کے ناسور کا خاتمہ کرنا ہے۔مراد سعید نے کہا کہ جس بے دردی سے اس ملک کو لوٹا گیا اس کی وصولی بھی کرنی ہے اور ان لوگوں کو جیل میں ڈالنا ہے، آئندہ کے لیے ایسی پالیساں بنانی ہیں کہ ملک کو کوئی لوٹ نہیں سکے۔وزیر مملکت نے کہا کہ یہاں روزگار ملے گا، یہاں بچوں کو تعلیم بھی ملے گی اور ملک سے باہر موجود پیسہ بھی واپس آئے گا ۔اس موقع پر اپوزیشن کی جانب سے مطالبہ کیا گیا کہ ان 7 افراد کے نام سامنے لائیں لیکن مراد سعید نے نام نہ بتائے ۔

کرکٹ سیریز، پاکستانی ٹیم کی جنوبی افریقہ روانگی

لاہور (آن لائن) جنوبی افریقہ کیخلاف سیریز کیلئے 16رکنی قومی کرکٹ ٹیم آج جمعرات کی علی الصبح لاہور اور کراچی سے دو مختلف فلائیٹس کے ذریعے براستہ دوبئی ساﺅتھ افریقہ روانہ ہوگی‘کراچی سے تعلق رکھنے والے کھلاڑی شان مسعود ،کپتان سرفراز احمد اور اسد شفیق کراچی سے روانہ ہوں گے جبکہ دیگر کھلاڑی لاہور سے روانہ ہوں گے ‘سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز کے دو نوں ٹیسٹ میچز اپنی غلطیوں سے ہارے لیکن جنوبی افریقہ کی سیریز میں ان غلطیوں کو نہیں دہرائیں گے اور بہتر نتائج دینے کی کوشش کریں گے‘ان کا کہنا تھا کہ جنوبی افریقہ کے خلاف سیریز آسان نہیں ہوگی تاہم قومی ٹیم کے کھلاڑی بہترین پرفارمنس کا مظاہرہ کرکے اچھی کارکردگی دکھائیں گے
پی سی بی کے ترجمان رضا راشد کے مطابق یاسر شاہ اپنی ذاتی وجوہات کی بنائ پر ٹیم کے ساتھ نہیں روانہ ہوسکیں گے‘ وہ 20دسمبر کو ٹیم کو جوائن کریں گے‘ جنوبی افریقہ کیخلاف قومی ٹیم نے ایک تین روزہ پریکٹس میچ سمیت تین ٹیسٹ، پانچ ون ڈے اور تین ٹی ٹوئنٹی میچز کھیلنا ہیں‘ سرفراز احمد قیادت کے فرائض سر انجام دیں گے‘ تین ٹیسٹ میچز کیلئے منتخب کردہ کھلاڑیوں میں فخرزمان، اظہر علی، شان مسعود، امام الحق، بابر اعظم،اسد شفیق،حارث سہیل،سرفراز احمد،یاسر شاہ، شاداب خان،محمد عامر، حسن علی،محمد عباس،فہیم اشرف ، شاہین ا?فریدی اور محمد رضوان شامل ہیں‘پاکستان ٹیم کرکٹ ساﺅتھ افریقہ کیخلاف پریکٹس میچ 19دسمبر کو کھیلے گی‘تین ٹیسٹ سیریز کا پہلا ٹیسٹ سینچورین میں26 تا 30دسمبر تک ہوگا ‘دوسرا ٹیسٹ کپ ٹاﺅن میں 3 تا 7جنوری ،تیسرا ٹیسٹ جوہانسبرگ میں 11 تا 15جنوری کو ہوگا‘پانچ ون ڈے میچز 19،22،25،27اور 30جنوری کو ہوں گے ‘تین ٹی ٹوئنٹی میچز 2,3,اور 6فروری کو ہوں گے‘پاکستانی ٹیم کو حال ہی میں نیوزی لینڈ کیخلاف ٹیسٹ سیریز میں 2-1سے شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے جس کی وجہ سے سرفراز احمد کی کپتانی پر سوال اٹھا ئے جارہے ہیں تاہم سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز کے دو نوں ٹیسٹ میچز اپنی غلطیوں سے ہارے لیکن جنوبی افریقہ کی سیریز میں ان غلطیوں کو نہیں دہرائیں گے اور بہتر نتائج دینے کی کوشش کریں گے‘ان کا کہنا تھا کہ جنوبی افریقہ کے خلاف سیریز آسان نہیں ہوگی تاہم قومی ٹیم کے کھلاڑی بہترین پرفارمنس کا مظاہرہ کرکے اچھی کارکردگی دکھائیں گے۔

شریف خاندان نے ذاتی ملازمین کے اکاﺅنٹس سے کروڑوں ڈالر باہر بھجوائے ، سٹیٹ بنک کی رپورٹ میں انکشاف

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) شریف خاندان کیخلاف سٹیٹ بنک کی فنانشل مانیٹرنگ یونٹ رپورٹ میں اہم انکشافات، شریف خاندان کے ڈرائیوروں، ویٹروں، مالی، مشیر اور جاتی امراءاور ماڈل ٹاﺅن کے ملازمین کے اکاﺅنٹس میں کروڑوں ڈالر کی ٹرانزیکشنز کی گئیں نجی ٹی وی کے مطابق پنجاب پولیس کے کانسٹیبلز کے اکاﺅنٹس بھی کروڑوں کی منتقلی کیلئے استعمال ہوئے پانامہ سکینڈل میں نام آنے کے بعد بنکوں نے مشکوک ٹرانزیکشنز کی رپورٹ ایف ایم یو کو دیں۔ جنوری 2011ءسے جولائی 2017ءکے دوران نوازشریف کو بیرون ملک سے 1 کروڑ ڈالر بھجوائے گئے وصولیوں میں سے 78 کروڑ مریم نواز کے منتقل کئے گئے۔ اکتوبر 2013ءاور جولائی 2017ءکے دوران ہل میٹلز سٹیل سے نوازشریف کو 35 ٹرانزیکشنز کی گئیں۔ شریف خاندان اور ان کے خاندان کے اکاﺅنٹس میں فضل داد اور مسرور انور فنڈز جمع کراتے رہے۔مقصود نامی ایک بنک صارف کے اکاﺅنٹ سے 900 ٹرانزیکشنز کی گئیں، 4 ارب کے غیر معمولی لین دین پر یو بی ایل نے الرٹ جاری کر دیا۔ تحقیقات سے پتہ چلا کہ مقصود نامی شخص 5 مرلہ کے گھر میں رہتا ہے۔ بعد ازاں مقصود دبئی فرار ہو گیا۔ رپورٹ کے مطابق جب بنک نے مشکوک ٹرانزیکشنز کی نشاندہی کر کے منی لانڈرنگ ایکٹ کی خلاف ورزی کی۔ انجم اقبال کو ہل میٹلز سے ساڑھے 17 کروڑ بھجوائے گئے۔ انجم نے شریف خاندان کے ڈرائیور پنوںخان کے اکاﺅنٹ میں پیسے ٹرانسفر کئے۔ انجم اقبال نے ہی پنجاب پولیس کے اہلکار ندیم سرور کے اکاﺅنٹ میں پیسے بھیجے کانسٹیبل محمد اقبال کے اکاﺅنٹ میں پیسے ٹرانسفر کئے گئے۔ انجم کے اکاﺅنٹ سے 272 بار ٹرانزیکشنز کی گئیں۔

اخبار فروش کے بغیر اخبار کا وجود نامکمل ہے،اخبارمارکیٹ لاہور کی بلڈنگ کی حالت انتہائی خستہ کسی بھی وقت گرسکتی ہے:چیف ایڈیٹر خبریںضیاشاہد

لاہور (خبر نگار) تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف ایڈیٹر روزنامہ خبریں ضیاشاہد کا کہنا تھا کہ میں اخبار فروش یونین کے منتخب نئے عہدیداروں کو مبارکباد دیتا ہوں اور امید کرتا ہوں کہ یہ نئی منتخب باڈی اخبار فروش کے مسائل بھر پور طریقے سے حل کرے گی انہوں نے کہا کہ اخبار فروش ہمارے اخبارات کا اہم ستون ہیں ان کے بغیر اخبارات نامکمل ہیں یہ اپنے مسائل کو چھوڑ کر اخبارات کی ترسیل کو برقت ادا کرتے ہیں یہ نہ گرمی دیکھتے ہیں نہ سردی اپنے کام میں مگن رہتے ہیں ۔اخبار فروشوں کے درپیش مسائل بارے خطاب کرتے ہوئے ضیا شاہد نے کہا کہ اخبار فروش کی عمارت انتہاہی خستہ حالت ہے یہ کسی بھی وقت گر سکتی ہے انہوں نے وزیر اطلاعات سے کہا کہ اپ حکومت میں ہیں اور اپکی حکومت انسانی حقوق کے بنیادی کام کر رہے ہیں جو کسی حکومت نے نہیں کئے اپ اس بلڈنگ بارے اپنی حکومت سے ضرور بات کریں ۔چیف ایڈیٹر روزنامہ خبریں ضیا شاہد نے اخبارات کے مسائل بارے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اخباری صنعت پہلے سے جھٹکوں سے چل رہی ہے لیکن موجودہ ھکومت نے اس کو سنبھالا دیا ہے اب اشتہارات بھی شروع ہوگئے ہیں حالات بہتری کی طرف جارہے ہیں اور میں امید کرتا ہوں کہ اور بہتری کی طرف جائیں سرکولیشن کے حوالے سے ضیا شاہد نے اپنا امریکی دورے کا حوالہ دیتے ہوئے کہنا تھا کہ مشرف دور میں مشرف کے ساتھ امریکہ گیا اور وہاں ایک تقریب میں امریکی صدر بش سے سوال کیا دوسرے دن میں اپنے بیان کے ھوالے سے اخبار لیا تو دیکھا اس میں وہ کوریج ہی نہیں تھی وجہ پوچھنے پر معلوم ہوا کہ جو خبر یہاں کے ٹی ویز پر چل جائے وہ دوسرے دن اخبارات میں شائع نہیں ہوتی لیکن یہاں ہمارے اخبارات میں وہ خبریں شائع ہوتی ہیں جو ساری رات ٹی وی چینلز پر چل چکی ہوتی ہیں ہمیں اخبارات میں ایسا مواد شائع کرنا ہوگا جس سے اخبار نویسوں میں اضافہ ہو یہ کام ہم سب نے بیٹھ کر کرنا ہوگا اخبار فروشوں کو ساتھ بیٹھاناہوگا ان سے رائع لینی ہوگی کیونکہ اخبار فروش کو زیادہ علم ہوتا ہے کہ اخبار کی ترسیل کیسے بڑھائی جاسکتی ہے ۔جاجی محمد رفیق مغل سرپرست اعلی الیکشن بورڈ نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اخبارات کی ترقی کے ساتھ ہماری ترقی ہے اگر اخبارات کی صنعت مسائل کا شکار ہوگی تو ہماری معاشی حالت خراب ہوگی اس لیئے اخبارات کو درپیش مسائل کو حکومت جلد حل کرے ۔انہوں نے کہا کہ ہماری عمارات انتہاہی خستہ حالت میں ہے حکومت اس پر توجہ دے اور یہاں نئی عمارات کا اعلان کرے ضیا شاہد نے صیح نشاندھی کی ہے کہ کہیں ایسا نہ ہو کہ یہ عمارات گر جائیے اور حادثہ رونما نہ ہوجائے۔

مصباح کو سرفراز احمد کی حالیہ فارم پر تشویش لاحق

کراچی(یواین پی )پاکستانی ٹیسٹ ٹیم کی خراب کارکردگی اور کپتان سرفراز احمد کی فارم پر سابق کپتان مصباح الحق کو بھی تشویش لاحق ہو گئی ہے جن کا کہنا ہے کہ وکٹ کیپر کی بیٹنگ اہمیت کی حامل مگر بطور بیٹسمین ناکامی نتائج پر منفی اثرات مرتب کر رہی ہے ،جب کپتان سے رنز نہ بنائے جائیں تو دہرے دباو¿ کا سامنا کرنا آسان نہیں ہوتا،ابوظہبی ٹیسٹ میں قومی بیٹسمینوں کے غیر ضروری شاٹس سمجھ سے بالاتر تھے ،کسی کو پلان کا اندازہ ہی نہیں تھا،اس طرح کی چیزیں ٹیم انتظامیہ کنٹرول کرتی ہے۔تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات میں اپنی ہوم کنڈیشنز کا برسوں سے فائدہ اٹھانے والی قومی ٹیم اب اچانک اس خطے میں بھی ہارنا شروع ہو گئی ہے جس کو دیکھ کر سابق کپتان مصباح الحق بھی حیران ہیں جن کو اس بات پر بھی تشویش لاحق ہو گئی ہے کہ کپتان سرفراز احمد بیٹنگ کے شعبے میں اس کارکردگی کے مالک نہیں جس کی ان سے توقع کی جاتی ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا ذرائع کے مطابق مصباح الحق کا کہنا تھا کہ یو اے ای میں کھیلتے ہوئے کسی بھی میدان پر پہلی اننگز میں برتری انتہائی اہمیت کی حامل ہوتی ہے اور ریکارڈز کا جائزہ لیا جائے تو پاکستان نے وہاں جتنی بھی کامیابیاں حاصل کیں اس دوران بھاری بھرکم اسکور بنائے گئے جن کا بھرپور فائدہ ملتا تھالیکن اب یہ معمول بن چکا ہے کہ قومی ٹیم ڈھائی سو سے تین سو رنز بنانے میں کامیاب ہو رہی ہے اور وکٹ پر پہنچ کر سیٹ ہو جانے والے بیٹسمین بھی سنچریاں بنانے سے محروم ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ نیوزی لینڈ کیخلاف آخری ٹیسٹ میں ابوظہبی کے شیخ زید اسٹیڈیم میں بھی ایسا ہی ہوا کہ لوئر مڈل آرڈر یا اس کے بعد آنے والے بیٹسمین ناکامی کا شکار ہوئے اور بڑا اسکور نہیں کیا جا سکا اور جب تک بیٹنگ لائن بڑے اسکورز تک رسائی میں ناکام رہے گی صورتحال میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔سابق قومی کپتان کا کہنا تھا کہ سب سے زیادہ تشویشناک بات تو یہ ہے کہ سرفراز احمد کی ذاتی بیٹنگ فارم مسائل کا شکار ہے جن کے بنائے گئے رنز قومی ٹیم کیلئے بہت زیادہ اہمیت کے حامل ہوتے ہیں اور اب ان کی ناکامی ٹیم پر نتائج کے حوالے سے منفی اثرات مرتب کر رہی ہے۔مصباح الحق نے واضح کیا کہ جب وہ قومی ٹیم کے کپتان تھے تو اچھی فارم کے ساتھ رنز بنانے کے باعث ان پر کسی قسم کا دباو نہیں ہوتا تھا اور یہ بات سمجھنے والی ہے کہ جب کپتان سے رنز نہیں ہوتے تو پھر اسے ذاتی کارکردگی کے ساتھ ٹیم کی مجموعی کارکردگی کا دہرا پریشر برداشت کرنا پڑتا ہے اور پھر ایسی صورتحال کو سنبھالنا آسان نہیں ہوتا اور سرفراز احمد بھی اسی وجہ سے شدید دباو¿ میں ہیں کہ ان کی اپنی کارکردگی میں مستقل مزاجی کا فقدان ہے۔سابق قومی کپتان نے اسپن بالرز کیخلاف پاکستانی بیٹسمینوں کی ناکامی سے متعلق سوال کے جواب میں کہا کہ ان کی ٹیم کی سب سے بڑی خوبی یہ تھی کہ اس کے بیٹسمین حریف اسپنرز کو اعتماد کے ساتھ کھیلتے اور بڑے اسکور کرنے میں کامیاب رہتے تھے لیکن اب اسپن بالنگ قومی ٹیم کی سب سے بڑی کمزوری بن چکی ہے کیونکہ پاکستانی بیٹسمین حریف اسپن بالرز کا مقابلہ کرنے میں ناکام ہو رہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ماضی قریب میں پاکستانی ٹیم نے رنگنا ہیراتھ،نیتھن لیون اور معین علی کیخلاف بڑے اسکورز بنا کر کامیابی کی راہیں ہموار کیں لیکن حالیہ عرصے میں اس شعبے کی ناکامی نے واضح کردیا ہے کہ اس جانب توجہ دینے کی بہت زیادہ ضرورت ہے۔مصباح الحق نے صاف گوئی کے ساتھ وضاحت کردی کہ کسی بھی ناکامی کیلئے محض کپتان کو ہی مورد الزام نہیں ٹھہرایا جا سکتا بلکہ ٹیم انتظامیہ اور کوچنگ اسٹاف میں موجود افراد بھی اس میں برابر کے ذمہ دار ہیں جن کی تیار کردہ حکمت عملی کارآمد ثابت نہیں ہو رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ٹیم کیلئے تیار کی جانے والی پلاننگ میں خامیاں دکھائی دے رہی ہیں لیکن ان کو دور کرنے کی کوشش نہیں کی جا رہی جس کے سبب دباو میں اضافہ ہو رہا ہے لیکن اس میں بیٹسمینوں کا کردار بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا جن کو ابوظہبی ٹیسٹ میں بخوبی اندازہ تھا کہ وہ ڈرا کیلئے کھیل رہے ہیں لیکن اختتامی پانچ بیٹسمینوں کا غیر ضروری طور پر اونچے شاٹس کھیلنا سمجھ سے بالاتر تھاجن کو اس بات کا علم ہی نہیں تھا کہ وہ کرنا کیا چاہتے ہیں اور ان کی پلاننگ ایسے وقت میں کیا ہونا چاہئے ،اس طرح کی چیزیں ٹیم انتظامیہ کو کنٹرول کرنا ہوتی ہیں لیکن بدقسمتی سے حالیہ میچوں میں ایسا کچھ بھی نہیں کیا گیاجس کے سبب ناکامیوں کا سامنا کرنا پڑا۔