تازہ تر ین

جے آئی ٹی کا فائنل راﺅنڈ شروع ، سوالنامہ تیار، حسن، حسین، مریم نواز سے حتمی بیان لینے کا فیصلہ

اسلام آباد(کرائم رپورٹر‘ مانیٹرنگ ڈیسک‘ ایجنسیاں) سکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن کے ریکارڈ میں تبدیلی کی تحقیقات کے لئے ایف آئی اے حکام نے متعلقہ افسران کے بیان ریکارڈ کرلئے۔ فائل میں جون 2016 ءمیں 2013 ءکی تاریخ درج کرنے کی تصدیق کی گئی۔ ذرائع کے متعلق ایس ای سی پی کے متعلقہ افسران نے ایف آئی اے ٹیم کو بتایا کہ چودھری شوگر ملزکی تحقیقات 2013 ءمیں ختم کردی گئی تھیں اسی سال برطانوی ادارے کو خط لکھا گیا تاہم فائل پر تحقیقات ختم کرنے کی تاریخ درج نہ تھی جون 2016 ءمیں 2013 ءکی پرانی تاریخ درج کرکے دستخط کئے گئے۔ ایف آئی اے ذرائع کا کہنا ہے کہ ابھی متعلقہ ایس ای سی پی حکام کے صرف بیان ریکارڈ ہوئے ہیں اب بیانات کو متعلقہ ریکارڈ سے ملایا جائے گا اور رپورٹ مرتب کرکے سپریم کورٹ میں پیش کی جائے گی۔ پانامہ کیس کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی کے سامنے سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان ( ایس ای سی پی )کی پانچ رکنی ٹیم نے بطور گواہ پیش ہو کر اپنا بیان ریکارڈکرادیا ہے ،منی لانڈرنگ اور چوہدری شوگر ملز سے پوچھ گچھ ہونے کے ساتھ ایس ای سی پی کے شعبہ کمپنی رجسٹریشن نے تمام دستاویزات اور اہم ریکارڈ بھی جے آئی ٹی کے حوالے کر دیا ہے ۔ جمعہ کے روز جے آئی ٹی اجلاس میں ایس ای سی پی کے ریجنل آفس لاہور سے پانچ رکنی ٹیم پاناما لیکس مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے سامنے پیش ہوئی اور اس موقع پر جے آئی ٹی نے ایس ای سی پی کے ریکارڈ کو چیک کرنے کے ساتھ ایس ای سی پی ٹیم پر سوالات کیے اور جہاں پر تضاد نظر آیا انکے نوٹ لکھے ۔ذرائع کا کہنا ہے جے آئی ٹی نے ایس ای سی پی ٹیم کے جوابات اور ریکارڈ کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے سپریم کورٹ کو پیش کرنے کے لیے رپورٹ بھی مرتب کرنا شروع کر دی ہے نیز کچھ اختلافی بیانات پر ایسے نوٹ بھی بنائے جا رہے ہیں جو کہ وزیراعظم کے کزن طارق شفیع ،حسن نواز،حسین نواز اورمریم صفدر کی جے آئی ٹی پیشی پر ان سے بھی سوال کیے جائیں گے ۔معلومات کے مطابق جے آئی ٹی اجلاس میں حدیبیہ پیپرملزاور دیگر اداروں سے حاصل ریکارڈ کا جائزہ لیا گیا ہے ۔دوسری جانب ریکارڈ ٹمپرنگ کے معاملہ پر رایف آئی اے کی خصوصی ٹیم نے تحقیقات مکمل کرلی ہیںذرائع کے مطابق چیئرمین ایس ای سی پی اورافسران ایف آئی اے ٹیم کو مطمئن نہ کرسکے ہیں ایف آئی اے کی ٹیم کے سامنے ایس ای سی ؛پی کے چیئر مین سمیت جن جن سے تحقیقات کی گئی ہیں انکے بیانات میں تضاد پایا گیا ہے ۔ ذرائع کا کہنا ہے ایف آئی اے نے ایس ای سی پی کا انٹرنیٹ سرور قبضے میں لے لیا ہے اور خیال کیا جارہا ہے ایف آئی آے ٹیم انٹرنیٹ سرور کا فرانز ک معائنہ کروائے گی اورچوہدری شوگر ملز کے بارے ہونے والی کمیونیکشن کا ریکارڈ سرور کے ذریعے حاصل کیا جائے گا،معلومات کے مطابق جے آئی ٹی نے 10جولائی کو سپریم کورٹ میں رپورٹ پیش کرنے کے حوالے شریف براداران کے متضاد بیانات پر بھی رپورٹ بنائی جارہی ہے جو کہ درجنوں صفحات پر مشتمل ہو گی۔ ایس ای سی پی کے سابق چیئرمین ظفر حجازی اور افسران جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوئے نجی ٹی وی ذرائع، چودھری شوگر ملز کے ریکارڈ میں ہیرا پھیری ثابت ہو گئی ہے۔ 2016ءمیں شوگر مل کے متعلق تحقیقات ہوئی تھیں۔ پرانی تاریخوں کے دستخط کے الزامات بھی درست نکلے۔ ایس ای سی پی کے عہدیداران کے ایک دوسرے پر الزامات لگانا شروع کر دیئے۔ ظفرحجازی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ انکوائری مکمل ہونے کے بعد اپنی پوزیشن واضع کروں گا۔ انہوں نے کہا کسی ادارے کے سربراہ کا اس ادارے کی ہر خامی سے آگاہ ہونا ضروری نہیں۔ ایس ای سی پی کے چیئرمین ظفر حجازی، ایگزیکٹو ڈائریکٹرز اور دیگر افسران شریف خاندان کی کاروباری تفصیلات کے ہمراہ پاناما کیس کی جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوگئے۔مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے سامنے ایس ای سی پی کے 5افسران چودھری شوگرملز کے خلاف تحقیقات کا ریکارڈ بھی ساتھ لائے۔سربراہ ایس ای سی پی نے اپنے دیگر افسران کے ہمراہ جے آئی ٹی کو شریف خاندان کی ملکیتی چوہدری شوگر ملز کے خلاف سال 2011میں شروع ہونے والی تحقیقاتی رپورٹ اور دستاویزات پیش کیں اور بتایا کہ یہ تحقیقات سال 2013میں بند کر دی گئی تھیں۔ذرائع نے بتایا ہے کہ ایس ای سی پی کے افسران نے تفتیش کے دوران جے آئی ٹی کو بتایا کہ چوہدری شوگر ملز کے خلاف تحقیقات روک دینے کا معاملہ مین شیٹ پر نہیں لایا گیا تھا۔علاوہ ازیں چئیرمین ایس ای سی پی ظفر حجازی نے جے آئی ٹی میں پیش ہونے کے بعد جاری بیان میں کہا کہ انہوں نے اپنی پوزیشن وفاقی تحقیاتی ادارے کے سامنے بیان کر دی ہے جو کہ کافی حد تک اخبارات میں شائع ہونے والی خبروں میں بھی واضح ہے۔ انہوں نے کہا کہ چونکہ انکوائری کی کارروائی ابھی جاری ہے اس لئے میں اس حوالے سے کوئی بھی بات عوامی سطح پر کہنا مناسب نہیں۔ تاہم جب انکوائری مکمل ہو جائے گی تو میںاپنی پوزیشن ضروری عوامی سطح پر بیان کروں گا۔ اس وقت صرف اتنا کہنا چاہوں گا کہ اینٹی منی لانڈرنگ کی کارروائی اور کمپنیز آرڈیننس 1984 کی دفعہ 263 کے تحت قانونی کارروائی دو الگ الگ اور مختلف چیزیں ہیں اور ان کو ملانا نہیں چاہیے۔دوسری اہم بات یہ ہے کہ ضروری نہیں کہ ایک ادارے کے سربراہ کو کسی خاص کیس میں کسی قسم کی خامیوں یا کمی بیشی کا ذاتی طور پر علم ہو اور ادارے کے سربراہ کو اس کا ذمہ دار بھی نہیں ٹھیرایا جا سکتا ۔ اگر ادارے کے افسران اور ملازموں کی کوتاہیوں کے لئے ذمہ دار ٹھہرایا جائے تو یہ کوئی اچھی روایت نہیں ہو گی اور ہر ایک افسر اپنی کوتاہیوں کے لئے ادارے کے سربراہ کو ذمہ دار ٹھہرائے گا۔واضح رہے کہ ایف آئی اے کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل واجد ضیا کی سربراہی میں چھ رکنی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے پاس اپنی رپورٹ مکمل کرنے کے لئے صر ف 9 دن رہ گئے ہیں ۔سپریم کورٹ نے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کو 10جولائی تک رپورٹ عدالت میں جمع کرانے کی ہدایت کر رکھی ہے۔ پاناما کیس کی تحقیقات کرنے والی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم رواں ہفتے وزیر اعظم نواز شریف کے صاحبزادوں اور صاحبزادی کو حتمی طور پر بلا کر اپنی رپورٹ مکمل کرنے جا رہی ہے جبکہ منی لانڈرنگ معاملے کے اہم گواہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار کو سب سے آخر میں طلب کرنے کا بھی فیصلہ کر لیا گیا ہے دوسری طرف نیب کے سابق چیرمین جنرل (ر) امجد نے حقائق سے پردہ اٹھا دیا ہے اورانکشاف کیا ہے کہ حدیبیہ پیپر ملز کیس کو عارضی طور پر بند کرنے کا حکم اس وقت کے صدر جنرل ر پرویز مشرف نے دیا تھا کیونکہ یہ جلاوطنی معاہدے کا حصہ تھا مگر یہ کیس کسی بھی وقت کھولا جا سکتا تھا۔ ذرائع نے بتایا کہ جے آئی ٹی نے شریف خاندان کے افراد کے بیانات کے تضادات پر سوالنامہ تیار کر لیا ہے اب وزیر اعظم کے صاحبزادوں ،صاحبزادی اور طارق شفیع سے حتمی بیانات لیے جایئں گے جے آئی ٹی ارکان شریف خاندان کے افراد سے متضاد بیانات سے متعلق سوالات پوچھے گی جے آئی ٹی میں دیے گئے بیانات شریف خاندان کے افراد کے سامنے رکھے جایئں گے ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ شریف خاندان منی ٹریل سے متعلق ٹھوس شواہد دینے میں تاحال ناکام ہے اور جے آئی ٹی حدیبیہ پیپر مل پر اسحاق ڈار کے ایک سو چونسٹھ کے بیان کو بنیاد بنا رہی ہے جے آئی ٹی شریف خاندان کے افراد سے حتمی بیانات لینے کے بعد رپورٹ مرتب کرئے گی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کادس جولائی تک رپورٹ مرتب کرنے کا امکان ہے کیونکہ اسے سپریم کورٹ کی جانب سے یہی حتمی ڈیڈ لائن دی گئی ہے دوسری طرف حدیبیہ پیپر مل کے معاملہ پر نیب کے سابق چیرمین جنرل (ر) امجد نے حقائق سے پردہ اٹھا دیا ہے ذرائع کے مطابق جب وہ چند دن قبل جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوئے تو ان سے جے آئی ٹی نے سوال کیا تھا کہ حدیبیہ پیپر مل کی انکوائری بند کرنے کے احکامات کس نے دیئے جس پر جنرل ر امجد کا جواب تھا کہ انکوائری بند کرناشریف خاندان اور پرویز مشرف کے درمیان جلا وطنی معاہدہ میں شامل تھا جنرل (ر) پرویز مشرف نے حدیبیہ پیپر مل کی انکوائری بند کرنے کا حکم دیا دوسری طرف ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ سابق چئیرمین نیب کا کہنا تھا کہ اس وقت اسحاق ڈار نے دو ہزار میں حدیبیہ پیپر مل کے معاملے پر مرضی سے بیان حلفی دیا تھا اور اسحاق ڈار نے پرویز مشرف کے قریبی ساتھی کی مدد سے بیان دینے کی خواہش کی تھی اب یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ مشترکہ تحقیقاتی ٹیم چھ یا سات جولائی کو اسحاق ڈار کو طلب کرئے گی اور اسحاق ڈار سے صرف بیان حلفی کی تصدیق یا تردید کا سوال پوچھا جائے گا۔



خاص خبریں


kutay ka bacha and bajwa
ForeignofficePakBuildingFile

سائنس اور ٹیکنالوجی



تازہ ترین ویڈیوز



HEAD OFFICE
Khabrain Tower
12 Lawrance Road Lahore
Pakistan

Channel Five Pakistan© 2015.
© 2015, CHANNEL FIVE PAKISTAN | All rights of the publication are reserved by channelfivepakistan.tv